Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / با ل جبر یل – منظو ما ت

با ل جبر یل – منظو ما ت

Bal-i Jibril (Gabriel’s Wing) continues from Bang-i Dara. Some of the verses had been written when Iqbal visited Britain, Italy, Egypt, Palestine, France, Spain and Afghanistan.

The work contains 15 ghazals addressed to God and 61 ghazals and 22 quatrains dealing the ego, faith, love, knowledge, the intellect and freedom. The poet recalls the past glory of Muslims as he deals with contemporary political problems.

قطعہ- کل اپنے مريدوں سے کہا پير مغاں نے

کل اپنے مريدوں سے کہا پير مغاں نے قيمت ميں يہ معني ہے درناب سے دہ چند زہراب ہے اس قوم کے حق ميں مےء افرنگ جس قوم کے بچے نہيں خوددار و ہنرمند ———————- Transliteration Kal Apne Mureedon Se Kaha Peer-e-Maghan Ne Qeemat Mein Ye Maani Hai Dar-e-Naab Se …

Read More »

قطعہ- فطرت مري مانند نسيم سحري ہے

فطرت مري مانند نسيم سحري ہے رفتار ہے ميري کبھي آہستہ ، کبھي تيز پہناتا ہوں اطلس کي قبا لالہ و گل کو کرتا ہوں سر خار کو سوزن کي طرح تيز ————————- Transliteration Fitrat Meri Manind-e-Naseem-e-Sehri Hai Raftar Hai Meri Kabhi Ahista, Kabhi Taez Pehnata Hun Atlas Ki Qaba …

Read More »

چيونٹی اورعقاب

چيونٹی ميں پائمال و خوار و پريشان و دردمند تيرا مقام کيوں ہے ستاروں سے بھي بلند؟ ———————— Transliteration Main Paimaal-o-Khawar-o-Preshan-o-Dardmand Tera Maqam Kyun Hai Sitaron Se Bhi Buland? عقاب تو رزق اپنا ڈھونڈتي ہے خاک راہ ميں ميں نہ سپہر کو نہيں لاتا نگاہ ميں ———————- Transliteration Tu Rizq …

Read More »

شير اور خچر

شير ساکنان دشت و صحرا ميں ہے تو سب سے الگ کون ہيں تيرے اب و جد ، کس قبيلے سے ہے تو؟ ———————— Transliteration Sakinaan-e-Dasht-o-Sehra Mein Hai Tu Sab Se Alag Kon Hain Tere Ab-o-Jad, Kis Qabeele Se Hai Tu? خچر ميرے ماموں کو نہيں پہچانتے شايد حضور شاہي …

Read More »

آزادی افکار

جو دوني فطرت سے نہيں لائق پرواز اس مرغک بيچارہ کا انجام ہے افتاد ہر سينہ نشيمن نہيں جبريل اميں کا صیادہر فکر نہيں طائر فردوس کا اس قوم ميں ہے شوخي انديشہ خطرناک جس قوم کے افراد ہوں ہر بند سے آزاد گو فکر خدا داد سے روشن ہے …

Read More »

يورپ

تاک ميں بيٹھے ہيں مدت سے يہودي سودخوار جن کي روباہي کے آگے ہيچ ہے زور پلنگ خود بخود گرنے کو ہے پکے ہوئے پھل کي طرح ديکھيے پڑتا ہے آخر کس کي جھولي ميں فرنگ —————————— Transliteration Taak Mein Baithe Hai Muddat Se Yahoodi Sood Khawar Jin Ki Roobahi …

Read More »

ماہر نفسيات سے

جرات ہے تو افکار کي دنيا سے گزر جا ہيں بحر خودي ميں ابھي پوشيدہ جزيرے کھلتے نہيں اس قلزم خاموش کے اسرار جب تک تو اسے ضرب کليمي سے نہ چيرے ————————— Transliteration Jurrat Hai To Afkar Ki Dunya Se Guzar Ja Hain Behar-e-Khudi Mein Abhi Poshida Jazeere Khulte …

Read More »

ہارون کی آخری نصيحت

ہاروں نے کہا وقت رحيل اپنے پسر سے جائے گا کبھي تو بھي اسي راہ گزر سے پوشيدہ ہے کافر کي نظر سے ملک الموت ليکن نہيں پوشيدہ مسلماں کي نظر سے ————————- Transliteration Haroon Ne Kaha Waqt-e-Raheel Apne Pisar Se Jaye Ga Kabhi Tu Bhi Issi Rah Guzar Se …

Read More »

باغی مريد

ہم کو تو ميسر نہيں مٹي کا ديا بھي گھر پير کا بجلي کے چراغوں سے ہے روشن شہري ہو، دہاتي ہو، مسلمان ہے سادہ مانند بتاں پجتے ہيں کعبے کے برہمن نذرانہ نہيں ، سود ہے پيران حرم کا ہر خرقہء سالوس کے اندر ہے مہاجن ميراث ميں آئي …

Read More »

شاہيں

کيا ميں نے اس خاک داں سے کنارا جہاں رزق کا نام ہے آب و دانہ بياباں کي خلوت خوش آتي ہے مجھ کو ازل سے ہے فطرت مري راہبانہ نہ باد بہاري ، نہ گلچيں ، نہ بلبل نہ بيماري نغمہ عاشقانہ خيابانيوں سے ہے پرہيز لازم ادائيں ہيں …

Read More »

فلسفی

بلند بال تھا ، ليکن نہ تھا جسور و غيور حکيم سر محبت سے بے نصيب رہا پھرا فضاؤں ميں کرگس اگرچہ شاہيں وار شکار زندہ کي لذت سے بے نصيب رہا ———————– Transliteration Buland Baal Tha,Lekin Na Tha Jasoor-o-Ghayyur Hakeem Sirr-e-Mohabbat Se Be-Naseeb Raha Phira Fazaon Mein Kargas Agarche …

Read More »

شيخ مکتب سے

شيخ مکتب ہے اک عمارت گر جس کي صنعت ہے روح انساني نکتہء دلپذير تيرے ليے کہہ گيا ہے حکيم قاآني ”پيش خورشيد بر مکش ديوار خواہي ار صحن خانہ نوراني ——————— Transliteration Sheikh-e-Maktab Hai Ek Amarat Gar Jis Ki San’at Hai Rooh-e-Insani Nukta-e-Dilpazeer Tere Liye Keh Gaya Hai Hakeem-e-Qa’ani …

Read More »

پرواز

کہا درخت نے اک روز مرغ صحرا سے ستم پہ غم کدئہ رنگ و بو کي ہے بنياد خدا مجھے بھي اگر بال و پر عطا کرتا شگفتہ اور بھي ہوتا يہ عالم ايجاد ديا جواب اسے خوب مرغ صحرا نے غضب ہے ، داد کو سمجھا ہوا ہے تو …

Read More »

لہو

اگر لہو ہے بدن ميں تو خوف ہے نہ ہراس اگر لہو ہے بدن ميں تو دل ہے بے وسواس جسے ملا يہ متاع گراں بہا ، اس کو نہ سيم و زر سے محبت ہے ، نے غم افلاس ———————— Transliteration Agar Lahoo Hai Badan Mein To Khof Hai …

Read More »

ابليس کي عرضداشت

کہتا تھا عزازيل خداوند جہاں سے پرکالہء آتش ہوئي آدم کي کف خاک! جاں لاغر و تن فربہ و ملبوس بدن زيب دل نزع کي حالت ميں ، خرد پختہ و چالاک ناپاک جسے کہتي تھي مشرق کي شريعت مغرب کے فقيہوں کا يہ فتوي ہے کہ ہے پاک تجھ …

Read More »

خانقاہ

رمز و ايما اس زمانے کے ليے موزوں نہيں اور آتا بھي نہيں مجھ کو سخن سازي کا فن ‘قم باذن اللہ’ کہہ سکتے تھے جو ، رخصت ہوئے خانقاہوں ميں مجاور رہ گئے يا گورکن ——————————– Transliteration Ramz-o-Aema Iss Zamane Ke Liye Mouzun Nahin Aur Ata Bhi Nahin Mujh …

Read More »

جدائی

سورج بنتا ہے تار زر سے دنيا کے ليے ردائے نوري عالم ہے خموش و مست گويا ہر شے کو نصيب ہے حضوري دريا ، کہسار ، چاند تارے کيا جانيں فراق و ناصبوري شاياں ہے مجھے غم جدائي يہ خاک ہے محرم جدائي ——————— Transliteration Suraj Bunta Hai Tar-e-Zar …

Read More »

خودي

خودي کو نہ دے سيم و زر کے عوض نہيں شعلہ ديتے شرر کے عوض يہ کہتا ہے فردوسي ديدہ ور عجم جس کے سرمے سے روشن بصر ”ز بہر درم تند و بدخو مباش تو بايد کہ باشي ، درم گو مباش —————————- Transliteration Khudi Ko Na De Seem-o-Zar …

Read More »

فقر

اک فقر سکھاتا ہے صےاد کو نخچيري اک فقر سے کھلتے ہيں اسرار جہاں گيري اک فقر سے قوموں ميں مسکيني و دلگيري اک فقر سے مٹي ميں خاصيت اکسيري اک فقر ہے شبري ، اس فقر ميں ہے ميري ميراث مسلماني ، سرمايہء شبيري —————————— Transliteration Ek Faqr Sikhata …

Read More »

سياست

اس کھيل ميں تعيين مراتب ہے ضروري شاطر کي عنايت سے تو فرزيں ، ميں پيادہ بيچارہ پيادہ تو ہے اک مہرئہ ناچيز فرزيں سے بھي پوشيدہ ہے شاطر کا ارادہ ———————— Transliteration Iss Khail Mein Taeyayeen-e-Maratib Hai Zaroori Shatir Ki Anayat Se Tu Farzeen, Mein Piyada Bechara Piyada To …

Read More »

پنچاب کےپيرزادوں سے

حاضر ہوا ميں شيخ مجدد کي لحد پر وہ خاک کہ ہے زير فلک مطلع انوار اس خاک کے ذروں سے ہيں شرمندہ ستارے اس خاک ميں پوشيدہ ہے وہ صاحب اسرار گردن نہ جھکي جس کي جہانگير کے آگے جس کے نفس گرم سے ہے گرمي احرار وہ ہند …

Read More »

سنيما

وہي بت فروشي ، وہي بت گري ہے سنيما ہے يا صنعت آزري ہے وہ صنعت نہ تھي ، شيوئہ کافري تھا يہ صنعت نہيں ، شيوئہ ساحري ہے وہ مذہب تھا اقوام عہد کہن کا يہ تہذيب حاضر کي سوداگري ہے وہ دنيا کي مٹي ، يہ دوزخ کي …

Read More »

ابوالعلامعری

کہتے ہيں کبھي گوشت نہ کھاتا تھا معري پھل پھول پہ کرتا تھا ہميشہ گزر اوقات اک دوست نے بھونا ہوا تيتر اسے بھيجا شايد کہ وہ شاطر اسي ترکيب سے ہو مات يہ خوان تر و تازہ معري نے جو ديکھا کہنے لگا وہ صاحب غفران و لزومات اے …

Read More »

حال ومقام

دل زندہ و بيدار اگر ہو تو بتدريج بندے کو عطا کرتے ہيں چشم نگراں اور احوال و مقامات پہ موقوف ہے سب کچھ ہر لحظہ ہے سالک کا زماں اور مکاں اور الفاظ و معاني ميں تفاوت نہيں ليکن ملا کي اذاں اور مجاہد کي اذاں اور پرواز ہے …

Read More »

تاتاري کا خواب

کہيں سجادہ و عمامہ رہزن کہيں ترسا بچوں کي چشم بے باک! ردائے دين و ملت پارہ پارہ قبائے ملک و دولت چاک در چاک! مرا ايماں تو ہے باقي وليکن نہ کھا جائے کہيں شعلے کو خاشاک! ہوائے تند کي موجوں ميں محصور سمرقند و بخارا کي کف خاک …

Read More »

خوشحال خاں کي وصيت

قبائل ہوں ملت کي وحدت ميں گم کہ ہو نام افغانيوں کا بلند محبت مجھے ان جوانوں سے ہے ستاروں پہ جو ڈالتے ہيں کمند مغل سے کسي طرح کمتر نہيں قہستاں کا يہ بچہء ارجمند کہوں تجھ سے اے ہم نشيں دل کي بات وہ مدفن ہے خوشحال خاں …

Read More »

نادر شاہ افغان

حضور حق سے چلا لے کے لولوئے لالا وہ ابر جس سے رگ گل ہے مثل تار نفس بہشت راہ ميں ديکھا تو ہو گيا بيتاب عجب مقام ہے ، جي چاہتا ہے جاؤں برس صدا بہشت سے آئي کہ منتظر ہے ترا ہرات و کابل و غزني کا سبزئہ …

Read More »

پنچاب کے دہقان سے

بتا کيا تري زندگي کا ہے راز ہزاروں برس سے ہے تو خاک باز اسي خاک ميں دب گئي تيري آگ سحر کي اذاں ہوگئي ، اب تو جاگ زميں ميں ہے گو خاکيوں کي برات نہيں اس اندھيرے ميں آب حيات زمانے ميں جھوٹا ہے اس کا نگيں جو …

Read More »

سوال

اک مفلس خود دار يہ کہتا تھا خدا سے ميں کر نہيں سکتا گلہء درد فقيري ليکن يہ بتا ، تيري اجازت سے فرشتے کرتے ہيں عطا مرد فرومايہ کو ميري ———————– Transliteration Ek Muflas-e-Khud-Dar Ye Kehta Tha Khuda Se Main Kar Nahin Sakta Gila-e-Dard-e-Faqeeri Lekin Ye Bata, Teri Ijazat …

Read More »

مسولينی

ندرت فکر و عمل کيا شے ہے ، ذوق انقلاب ندرت فکر و عمل کيا شے ہے ، ملت کا شباب ندرت فکر و عمل سے معجزات زندگي ندرت فکر و عمل سے سنگ خارا لعل ناب رومتہ الکبرے! دگرگوں ہوگيا تيرا ضمير اينکہ مي بينم بہ بيدار يست يارب …

Read More »

نپولين کے مزار پر

راز ہے ، راز ہے تقدير جہان تگ و تاز جوش کردار سے کھل جاتے ہيں تقدير کے راز جوش کردار سے شمشير سکندر کا طلوع کوہ الوند ہوا جس کي حرارت سے گداز جوش کردار سے تيمور کا سيل ہمہ گير سيل کے سامنے کيا شے ہے نشيب اور …

Read More »

فلسفہ و مذہب

فلسفہ  و مذہب يہ   آفتاب کيا ، يہ سپہر بريں ہے کيا سمجھا  نہيں تسلسل شام و سحر کو ميں اپنے  وطن ميں ہوں کہ غريب الديار ہوں ڈرتا ہوں ديکھ ديکھ کے اس دشت و در کو ميں کھلتا نہيں مرے سفر زندگي کا راز لاؤں کہاں سے بندئہ صاحب …

Read More »

جاويد کے نام

جاويد  کے نام لندن ميں اس کے ہاتھ کا لکھا ہوا پہلا خط آنے پر ديار عشق ميں اپنا مقام پيدا کر نيا زمانہ ، نئے صبح و شام پيدا کر خدا اگر دل فطرت شناس دے تجھ کو سکوت لالہ و گل سے کلام پيدا کر اٹھا نہ شيشہ گران فرنگ کے احساں سفال ہند سے مينا …

Read More »

يورپ سے ايک خط

ہم خوگر محسوس ہيں ساحل کے خريدار اک بحر پر آشوب و پر اسرار ہے رومي تو بھي ہے اسي قافلہء شوق ميں اقبال جس قافلہء شوق کا سالار ہے رومي اس عصر کو بھي اس نے ديا ہے کوئي پيغام؟ کہتے ہيں چراغ رہ احرار ہے رومي ———————– Transliteration …

Read More »

ستارےکاپيغام

مجھے ڈرا نہيں سکتي فضا کي تاريکي مري سرشت ميں ہے پاکي و درخشاني تو اے مسافر شب! خود چراغ بن اپنا کر اپني رات کو داغ جگر سے نوراني ———————- Transliteration Mujhe Dra Nahin Sakti Faza Ki Tareeki Meri Sarisht Mein Hai Paki-o-Durkhashani Tu Ae Musafir-e-Shab! Khud Charagh Ban …

Read More »

محبت

شہيد محبت نہ کافر نہ غازي محبت کي رسميں نہ ترکي نہ تازي وہ کچھ اور شے ہے ، محبت نہيں ہے سکھاتي ہے جو غزنوي کو ايازي يہ جوہر اگر کار فرما نہيں ہے تو ہيں علم و حکمت فقط شيشہ بازي نہ محتاج سلطاں ، نہ مرعوب سلطاں …

Read More »

اذان

اک رات ستاروں سے کہا نجم سحر نے آدم کو بھي ديکھا ہے کسي نے کبھي بيدار؟ کہنے لگا مريخ ، ادا فہم ہے تقدير ہے نيند ہي اس چھوٹے سے فتنے کو سزاوار زہرہ نے کہا ، اور کوئي بات نہيں کيا؟ اس کرمک شب کور سے کيا ہم …

Read More »

جبريل وابليس

جبريل ہمدم ديرينہ! کيسا ہے جہان رنگ و بو؟ —————— Humdam Dairina! Kaisa Hai Jahan-e-Rang-o-Boo? ابليس سوز و ساز و درد و داغ و جستجوے و آرزو —————— Souz-o-Saaz-o-Dard-o-Dagh-o-Justujooye-o-Arzoo جبريل ہر گھڑي افلاک پر رہتي ہے تيري گفتگو کيا نہيں ممکن کہ تيرا چاک دامن ہو رفو؟ —————— Har Ghari …

Read More »

پيرو مريد

مريد ہندی چشم بينا سے ہے جاری جوئے خوں علم حاضر سے ہے ديں زار و زبوں پيررومی علم را بر تن زنی مارے بود علم را بر دل زنی يارے بود مريدہندی اے امام عاشقان دردمند ياد ہے مجھ کو ترا حرف بلند خشک مغز و خشک تار و …

Read More »

روح ارضی آدم کا استقبال کرتی ہے

کھول آنکھ ، زميں ديکھ ، فلک ديکھ ، فضا ديکھ مشرق سے ابھرتے ہوئے سورج کو ذرا ديکھ اس جلوۂ بے پردہ کو پردوں ميں چھپا ديکھ ايام جدائی کے ستم ديکھ ، جفا ديکھ بے تاب نہ ہو معرکۂ بيم و رجا ديکھ ہيں تيرے تصرف ميں يہ …

Read More »

فرشتے آدم کو جنت سے رخصت کرتے ہيں

عطا ہوئی ہے تجھے روزوشب کی بيتابی خبر نہيں کہ تو خاکی ہے يا کہ سيمابی سنا ہے ، خاک سے تيری نمود ہے ، ليکن تری سرشت ميں ہے کوکبی و مہ تابی جمال اپنا اگر خواب ميں بھی تو ديکھے ہزار ہوش سے خوشتر تری شکر خوابی گراں …

Read More »

زمانہ

جو تھا نہيں ہے ، جو ہے نہ ہو گا ، يہی ہے اک حرف محرمانہ قريب تر ہے نمود جس کی ، اسی کا مشتاق ہے زمانہ مری صراحی سے قطرہ قطرہ نئے حوادث ٹپک رہے ہيں ميں اپنی تسبيح روز و شب کا شمار کرتا ہوں دانہ دانہ …

Read More »

ساقی نامہ

ہوا خيمہ زن کاروان بہار ارم بن گيا دامن کوہسار گل و نرگس و سوسن و نسترن شہيد ازل لالہ خونيں کفن جہاں چھپ گيا پردۂ رنگ ميں لہو کی ہے گردش رگ سنگ ميں فضا نيلی نيلی ، ہوا ميں سرور ٹھہرتے نہيں آشياں ميں طيور وہ جوئے کہستاں …

Read More »

لالہ صحرا

يہ گنبد مينائی ، يہ عالم تنہائی مجھ کو تو ڈراتی ہے اس دشت کی پہنائی بھٹکا ہوا راہی ميں ، بھٹکا ہوا راہی تو منزل ہے کہاں تيری اے لالۂ صحرائی خالی ہے کليموں سے يہ کوہ و کمر ورنہ تو شعلۂ سينائی ، ميں شعلۂ سينائی! تو شاخ …

Read More »

نصيحت

بچۂ شاہيں سے کہتا تھا عقاب سالخورد اے تيرے شہپر پہ آساں رفعت چرخ بريں ہے شباب اپنے لہو کی آگ ميں جلنے کا نام سخت کوشی سے ہے تلخ زندگانی انگبيں جو کبوتر پر جھپٹنے ميں مزا ہے اے پسر وہ مزا شايد کبوتر کے لہو ميں بھی نہيں …

Read More »

ايک نوجوان کے نام

ترے صوفے ہيں افرنگی ، ترے قاليں ہيں ايرانی لہو مجھ کو رلاتی ہے جوانوں کی تن آسانی امارت کيا ، شکوہ خسروی بھی ہو تو کيا حاصل نہ زور حيدری تجھ ميں ، نہ استغنائے سلمانی نہ ڈھونڈ اس چيز کو تہذيب حاضر کی تجلی ميں کہ پايا ميں …

Read More »

الارض للہ

پالتا ہے بيج کو مٹی کو تاريکی ميں کون کون درياؤں کی موجوں سے اٹھاتا ہے سحاب؟ کون لايا کھينچ کر پچھم سے باد سازگار خاک يہ کس کی ہے ، کس کا ہے يہ نور آفتاب؟ کس نے بھردی موتيوں سے خوشۂ گندم کی جيب موسموں کو کس نے …

Read More »

دين و سياست

کليسا کی بنياد رہبانيت تھی سماتی کہاں اس فقيری ميں ميری خصومت تھی سلطانی و راہبی ميں کہ وہ سربلندی ہے يہ سربزيری سياست نے مذہب سے پيچھا چھٹرايا چلی کچھ نہ پير کليسا کی پيری ہوئی دين و دولت ميں جس دم جدائی ہوس کی اميری ، ہوس کی …

Read More »

ملا اور بہشت

ميں بھی حاضر تھا وہاں ، ضبط سخن کر نہ سکا حق سے جب حضرت ملا کو ملا حکم بہشت عرض کی ميں نے ، الہی! مری تقصير معاف خوش نہ آئيں گے اسے حور و شراب و لب کشت نہيں فردوس مقام جدل و قال و اقول بحث و …

Read More »

گدائی

مے کدے ميں ايک دن اک رند زيرک نے کہا ہے ہمارے شہر کا والی گدائے بے حيا تاج پہنايا ہے کس کی بے کلاہی نے اسے کس کی عريانی نے بخشی ہے اسے زريں قبا اس کے آب لالہ گوں کی خون دہقاں سے کشيد تيرے ميرے کھيت کی …

Read More »