باغی مريد

ہم کو تو ميسر نہيں مٹي کا ديا بھي
گھر پير کا بجلي کے چراغوں سے ہے روشن
شہري ہو، دہاتي ہو، مسلمان ہے سادہ
مانند بتاں پجتے ہيں کعبے کے برہمن
نذرانہ نہيں ، سود ہے پيران حرم کا
ہر خرقہء سالوس کے اندر ہے مہاجن

ميراث ميں آئي ہے انھيں مسند ارشاد
زاغوں کے تصرف ميں عقابوں کے نشيمن

————————–

Transliteration

Hum Ko To Mayassar Nahin Mitti Ka Diya Bhi
Ghar Peer Ka Bijli Ke Charaghon Se Hai Roshan

Shehri Ho, Dahati Ho, Musalman Hai Sada
Manind-e-Poojte Hain Kaabe Ke Barhman

Nazrana Nahin, Sood Hai Peeran-e-Haram Ka
Har Kharqa-e-Saaloos Ke Andar Hai Mahajan

Meeras Mein Ayi Hai Inhain Masnad-e-Irshad
Zaghon Ke Tasarruf Mein Auqabon Ke Nasheman!

————————–

Not a rushlight for us,—in our Master’s
Fine windows electric lights blaze!

Town or village, the Muslim’s a duffer—
To his Brahmins like idols he prays.

Not mere gifts—compound interest these saints want,
In each hair‐shirt a usurer’s dressed,

Who inherits his seat of authority
Like a crow in the eagle’s old nest.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے