Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / با ل جبر یل - منظو ما ت / فرشتے آدم کو جنت سے رخصت کرتے ہيں

فرشتے آدم کو جنت سے رخصت کرتے ہيں

عطا ہوئی ہے تجھے روزوشب کی بيتابی
خبر نہيں کہ تو خاکی ہے يا کہ سيمابی
سنا ہے ، خاک سے تيری نمود ہے ، ليکن
تری سرشت ميں ہے کوکبی و مہ تابی
جمال اپنا اگر خواب ميں بھی تو ديکھے
ہزار ہوش سے خوشتر تری شکر خوابی
گراں بہا ہے ترا گريۂ سحر گاہی
اسی سے ہے ترے نخل کہن کی شادابی
تری نوا سے ہے بے پردہ زندگی کا ضمير
کہ تيرے ساز کی فطرت نے کی ہے مضرابی

—————————

Transliteration

Farishte Adam Ko Jannat Se Rukhsat Karte Hain

Atta Huwi Hai Tujhe Roz-o-Shab Ki Betabi
Khabar Nahin Ke Tu Khaki Hai Ye Ke Seemabi

Suna Hai, Khak Se Teri Namood Hai, Lekin
Teri Sarisht Mein Hai Kokabi-o-Mehtabi

Jamal Apna Agar Khawab Mein Bhi Tu Dekhe
Hazar Hosh Se Khushtar Teri Shukar Khawabi

Garan Baha Hai Tera Girya-e-Sehargahi
Issi Se Hai Tere Nakhl-e-Kuhan Ki Shadabi

Teri Nawa Se Hai Be-Parda Zindagi Ka Zameer
Ke Tere Saaz Ki Fitrat Ne Ki Hai Mizrabi

————————–

The Angels Bid Farewell To Adam

You have been given the restlessness of Day and Night,
We know not whether you are made of clay or mercury;

We hear you are created from clay,
But in your nature is the glitter of Stars and Moon.

Your sleep would be preferable over much wakefulness
If you could behold your own beauty even in a dream!

Your morning sighs are invaluable
For they are the water to your ancient tree.

Your melody unravels the secret of life
For it is Nature that has attuned your organ.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے