شاعر

قوم گويا جسم ہے ، افراد ہيں اعضائے قوم
منزل صنعت کے رہ پيما ہيں دست و پائے قوم
محفل نظم حکومت ، چہرۂ زيبائے قوم
شاعر رنگيں نوا ہے ديدہ بينائے قوم

مبتلائے درد کوئی عضو ہو روتی ہے آنکھ
کس قدر ہمدرد سارے جسم کی ہوتی ہے آنکھ

 

———-

Transliteration

Shayar

Qoum Goya Jism Hai, Afrad Hain Azaaye Qoum
Manzil-e-Sanaat Ke Rah Pema Hain Dast-O-Paye Qoum

 

Mehfil-e-Nazam-e-Hukumat, Chehra-e-Zaibaye Qoum
Shayar-e-Rangee Nawa Hai Dida-e-Beenaye Qoum

Mubtalaye Dard Koi Uzoo Ho, Roti Hai Ankh
Kis Qadar Hamdard Sare Jism Ki Hoti Hai Ankh

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے