آزادی افکار

جو دوني فطرت سے نہيں لائق پرواز
اس مرغک بيچارہ کا انجام ہے افتاد
ہر سينہ نشيمن نہيں جبريل اميں کا
صیادہر فکر نہيں طائر فردوس کا
اس قوم ميں ہے شوخي انديشہ خطرناک
جس قوم کے افراد ہوں ہر بند سے آزاد
گو فکر خدا داد سے روشن ہے زمانہ
آزادي افکار ہے ابليس کي ايجاد

——————————————–

Transliteration

Jo Dooni Fitrat Se Nahin Laik-e-Parwaz
Uss Murghak-e-Bechara Ka Anjaam Hai Uftaad

Har Seena Naheman Nahin Jibreel-e-Ameen Ka
Har Fikar Nahin Tair-e-Firdous Ka Sayyad

Uss Qoum Mein Hai Shoukhi-e-Andesha Khatarnak
Jis Qoum Ke Afraad Hon Har Band Se Azad

Go Fikar-e-Khudad Se Roshan Hai Zamana
Azadi-e-Afkar Hai Iblees Ki Aejaad

————————–

FREEDOM OF THOUGHT

Falling down is the destiny of that bird
Whose duality of nature renders him unable to fly.

Not every heart is an abode to the trusty Gabriel,
Nor can every thought ensnare the Paradise like a bird.

The ecstasy of thought is dangerous in a nation
Where the individuals observe no rule.

Though God‐gifted intellect is the lamp of an age,
The freedom of thought is a Satanic concept

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

شير اور خچر

شير ساکنان دشت و صحرا ميں ہے تو سب سے الگ کون ہيں تيرے اب …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے