حال ومقام

دل زندہ و بيدار اگر ہو تو بتدريج
بندے کو عطا کرتے ہيں چشم نگراں اور


احوال و مقامات پہ موقوف ہے سب کچھ
ہر لحظہ ہے سالک کا زماں اور مکاں اور


الفاظ و معاني ميں تفاوت نہيں ليکن
ملا کي اذاں اور مجاہد کي اذاں اور

پرواز ہے دونوں کي اسي ايک فضا ميں
کرگس کا جہاں اور ہے ، شاہيں کا جہاں اور

———————————-

Transliteration

Dil Zinda-o-Baidar Agar Ho To Batadreej
Bande Ko Atta Karte Hain Chashme-e-Nigran Aur

Ahwal-o-Maqamat Pe Mouqoof Hai Sub Kuch
Har Lehza Hai Salik Ka Zaman Aur Makan Aur

Alfaz-o-Maani Mein Tafawat Nahin Lekin
Mullah Ki Azan Aur, Mujahid Ki Azan Aur

Parwaz Hai Dono Ki Issi Aik Faza Mein
Kargas Ka Jahan Aur Hai, Shaheen Ka Jahan Aur

————————–

When the heart is enlightened,
It is blessed with an inward eye.

The initiate has a different level
Of space and time in each position.

The mullah’s and the mujahid’s azan,
The same in words, are apart in spirit.

The vulture and the eagle soar
In the same air, but in worlds apart.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے