Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / با ل جبر یل - منظو ما ت / قطعہ- فطرت مري مانند نسيم سحري ہے

قطعہ- فطرت مري مانند نسيم سحري ہے

فطرت مري مانند نسيم سحري ہے
رفتار ہے ميري کبھي آہستہ ، کبھي تيز
پہناتا ہوں اطلس کي قبا لالہ و گل کو
کرتا ہوں سر خار کو سوزن کي طرح تيز

————————-

Transliteration

Fitrat Meri Manind-e-Naseem-e-Sehri Hai
Raftar Hai Meri Kabhi Ahista, Kabhi Taez

Pehnata Hun Atlas Ki Qaba Lala-o-Gul Ko
Karta Hun Sar-e-Khar Ko Souzan Ki Tarah Taez

————————–

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

آزادی افکار

جو دوني فطرت سے نہيں لائق پرواز اس مرغک بيچارہ کا انجام ہے افتاد ہر …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے