Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / با ل جبر یل - منظو ما ت / قطعہ- فطرت مري مانند نسيم سحري ہے

قطعہ- فطرت مري مانند نسيم سحري ہے

فطرت مري مانند نسيم سحري ہے
رفتار ہے ميري کبھي آہستہ ، کبھي تيز
پہناتا ہوں اطلس کي قبا لالہ و گل کو
کرتا ہوں سر خار کو سوزن کي طرح تيز

————————-

Transliteration

Fitrat Meri Manind-e-Naseem-e-Sehri Hai
Raftar Hai Meri Kabhi Ahista, Kabhi Taez

Pehnata Hun Atlas Ki Qaba Lala-o-Gul Ko
Karta Hun Sar-e-Khar Ko Souzan Ki Tarah Taez

————————–

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے