Home / علامہ اقبال شاعری / با نگ درا / بانگ درا (حصہ سوم)

بانگ درا (حصہ سوم)

بانگ درا (حصہ سوم) Archives – Urdu Poetry Library

اے باد صبا! کملي والے سے جا کہيو پيغام مرا

Aay Baad e Saba! Kamli Waly Say Jaa Kahiu Paigham Mera

اےباد صبا! کملي والے سے جا کہيو پيغام مرا قبضےسے امت بيچاري کے ديں بھي گيا، دنيا بھي گئي يہموج پريشاں خاطر کو پيغام لب ساحل نے ديا ہےدور وصال بحر بھي، تو دريا ميں گھبرا بھي گئي! عزتہے محبت کي قائم اے قيس! حجاب محمل سے محملجو گيا عزت …

Read More »

يہ سرود قمري و بلبل فريب گوش ہے

Ye Sarood Qamri o Bulbul Fareeb Goosh Hay

يہ سرود قمري و بلبل فريب گوش ہے باطن ہنگامہ آباد چمن خاموش ہے تيرے پيمانوں کا ہے يہ اے مےء مغرب اثر خندہ زن ساقي ہے، ساري انجمن بے ہوش ہے دہر کے غم خانے ميں تيرا پتا ملتا نہيں جرم تھا کيا آفرينش بھي کہ تو روپوش ہے آہ! دنيا دل سمجھتي ہے جسے، وہ …

Read More »

نالہ ہے بلبل شوريدہ ترا خام ابھي

Nala Hay Bulbul Shoridah Tera Kham Abi

نالہ ہے بلبل شوريدہ ترا خام ابھي اپنے سينے ميں اسے اور ذرا تھام ابھي پختہ ہوتي ہے اگر مصلحت انديش ہو عقل عشق ہو مصلحت انديش تو ہے خام ابھي بے خطر کود پڑا آتش نمردو ميں عشق عقل ہے محو تماشائے لب بام ابھي عشق فرمودئہ قاصد سے سبک گام عمل  عقل سمجھي ہي نہيں معني …

Read More »

پردہ چہرے سے اُٹھا ، انجمن آرائی کر

Pardah Chahry Say Otha, Anjuman Arai Kr

پردہ چہرے سے اُٹھا ، انجمن آرائی کر چشمِ مَہْر و مَہ و انجم کو تماشائی کر تو جو بجلی ہے تو يہ چَشمک ِپنہاں کب تک بے حِجابانہ مرے دل سے شناسائی کر نَفَسِ گرم کی تاثير ہے اعجازِ حيات  تيرے سينے ميں اگر ہے تو مسيحائی کر کب تلک طور پہ دَریوزَہ گَری مِثلِ کليم …

Read More »

پھر باد بہار آئي ، اقبال غزل خواں ہو

Phir Baad e Bahar Aai, Iqbal Ghazal Khawan Howa

پھر باد بہار آئي ، اقبال غزل خواں ہو غنچہ ہے اگر گل ہو ، گل ہے تو گلستاں ہو تو خاک کي مٹھي ہے ، اجزا کي حرارت سے برہم ہو، پريشاں ہو ، وسعت ميں بياباں ہو تو جنس محبت ہے ، قيمت ہے گراں تيري کم مايہ …

Read More »

کبھی اے حقيقتِ منتظر نظر آ لِباس ِمجاز ميں

Kabi Aay Haqiqat e Mutazar Aa Libas e Majaz Main

کبھی اے حقيقتِ منتظر نظر آ لِباس ِمجاز ميں کہ ہزاروں سجدے تڑپ رہے ہيں مری جبينِ نياز ميں طَرَب آشنائے خروش ہو، تو  نوا ہے محرم گوش ہو وہ سُرُود کيا کہ چھپا  ہوا  ہو سکوت پردۂ   ساز ميں تو بچابچا کے نہ رکھ اسے،  ترا آئنہ ہے وہ آئنہ کہ شِکَسْتَہ ہو تو عزيز …

Read More »

تہ دام بھي غزل آشنا رہے طائران چمن تو کيا

Ta Dam Ghazal Aashna Rahy Tairaan

تہ دام بھي غزل آشنا رہے طائران چمن تو کيا جو فغاں دلوں ميں تڑپ رہي تھي، نوائے زير لبي رہي ترا جلوہ کچھ بھي تسلي دل ناصبور نہ کر سکا وہ گريہ سحري رہا ، وہي آہ نيم شبي رہي نہ خدا رہا نہ صنم رہے ، نہ رقيب دير حرم رہے نہ رہي کہيں …

Read More »

گرچہ تو زنداني اسباب ہے

Garcha Tu Zindagani Asbab Hay

گرچہ تو زنداني اسباب ہے قلب کو ليکن ذرا آزاد رکھ عقل کو تنقيد سے فرصت نہيں عشق پر اعمال کي بنياد رکھ اے مسلماں! ہر گھڑي پيش نظر آيہ ‘لا يخلف الميعاد’ رکھ يہ ‘لسان العصر’ کا پيغام ہے ‘ان وعد اللہ حق” ياد رکھ”

Read More »

مسجد تو بنا دی شب بھر ميں ايماں کی حرارت والوں نے

Masjid To Bana Di Shab Bhar Main

مسجد تو بنا دي شب بھر ميں ايماں کي حرارت والوں نے من اپنا پرانا پاپي ہے، برسوں ميں نمازي بن نہ سکا کيا خوب امير فيصل کو سنوسي نے پيغام ديا تو نام و نسب کا حجازي ہے پر دل کا حجازي بن نہ سکا تر آنکھيں تو ہو …

Read More »

تکرارتھي مزارع و مالک ميں ايک روز

Takrar The Mazaraa o Maalik Main Aik Rooz

تکرار تھي مزارع و مالک ميں ايک روز دونوں يہ کہہ رہے تھے، مرا مال ہے زميں کہتا تھا وہ، کرے جو زراعت اسي کا کھيت کہتا تھا يہ کہ عقل ٹھکانے تري نہيں پوچھا زميں سے ميں نے کہ ہے کس کا مال تو بولي مجھے تو ہے فقط …

Read More »

شام کي سرحد سے رخصت ہے وہ رند لم يزل

Shaam Ki Sarhad Say Rukhsat Hay Wo Rind Lam Yazal

شام کي سرحد سے رخصت ہے وہ رند لم يزل رکھ کے ميخانے کے سارے قاعدے بالائے طاق يہ اگر سچ ہے تو ہے کس درجہ عبرت کا مقام رنگ اک پل ميں بدل جاتا ہے يہ نيلي رواق حضرت کرزن کو اب فکر مداوا ہے ضرور حکم برداري کے معدے ميں ہے درد لايطاق وفد ہندستاں …

Read More »

محنت و سرمايہ دنيا ميں صف آرا ہو گئے

Mahnat o Sarmaya Dunya Main Saf Aaraa Ho Gay

محنت و سرمايہ دنيا ميں صف آرا ہو گئے ديکھے ہوتا ہے کس کس کي تمنائوں کا خون حکمت و تدبير سے يہ فتنہ آشوب خيز وقد کنتم بہ تستعجلونٹل نہيں سکتا ، ، ‘کھل گئے، ياجوج اور ماجوج کے لشکر تمام ينسلونچشم مسلم ديکھ لے تفسير حرف  

Read More »

يہ آيہ نو ، جيل سے نازل ہوئي مجھ پر

Ye Aaya Nu, Jail Say Naazil Hoi Mjh Par

يہ آيہ نو ، جيل سے نازل ہوئي مجھ پر گيتا ميں ہے قرآن تو قرآن ميں گيتا کيا خوب ہوئي آشتي شيخ و برہمن اس جنگ ميں آخر نہ يہ ہارا نہ وہ جيتا مندر سے تو بيزار تھا پہلے ہي سے ‘بدري’ مسجد سے نکلتا نہيں، ضدي ہے …

Read More »

گائےاک روز ہوئی اونٹ سے يوں گرم سخن

Gaay Ik Rooz Hoi Oont Say Youn Garam Sukhan

گائے اک روز ہوئي اونٹ سے يوں گرم سخن نہيں اک حال پہ دنيا ميں کسي شے کو قرار ميں تو بد نام ہوئي توڑ کے رسي اپني سنتي ہوں آپ نے بھي توڑکے رکھ دي ہے مہار ہند ميں آپ تو از روئے سياست ہيں اہم ريل چلنے سے …

Read More »

فرما رہے تھے شيخ طريق عمل پہ وعظ

Farma Rahy They Shiekh Tareeq Amal Pay Waaz

فرما رہے تھے شيخ طريق عمل پہ وعظ کفار ہند کے ہيں تجارت ميں سخت کوش مشرک ہيں وہ جو رکھتے ہيں مشرک سے لين دين ليکن ہماري قوم ہے محروم عقل و ہوش ناپاک چيز ہوتي ہے کافر کے ہاتھ کي سن لے، اگر ہے گوش مسلماں کا حق …

Read More »

دليل مہر و وفا اس سے بڑھ کے کيا ہوگی

Dalil Mahr o Wafa IS Say Barh Kay Kia

دليل مہر و وفا اس سے بڑھ کے کيا ہوگي نہ ہو حضور سے الفت تو يہ ستم نہ سہيں مصر ہے حلقہ ،کميٹي ميں کچھ کہيں ہم بھي مگر رضائے کلکٹر کو بھانپ ليں تو کہيں سند تو ليجيے ، لڑکوں کے کام آئے گي وہ مہربان ہيں اب، …

Read More »

وہ مس بولي ارادہ خودکشي کا جب کيا ميں نے

Wo Mis Booli Irada Khud'Kashi Ka Jab Kia Main Nay

وہ مس بولي ارادہ خودکشي کا جب کيا ميں نے مہذب ہے تو اے عاشق! قدم باہر نہ دھر حد سے نہ جرات ہے ، نہ خنجر ہے تو قصد خودکشي کيسا يہ مانا درد ناکامي گيا تيرا گزر حد سے کہا ميں نے کہ اے جاں جہاں کچھ نقد …

Read More »

اصل شہود و شاہد و مشہود ايک ہے

Asal Shahood o Shaahid o Mash'hood Aek Hay

اصل شہود و شاہد و مشہود ايک ہے غالب کا قول سچ ہے تو پھر ذکر غير کيا کيوں اے جناب شيخ! سنا آپ نے بھي کچھ کہتے تھے کعبے والوں سے کل اہل دير کيا ہم پوچھتے ہيں مسلم عاشق مزاج سے الفت بتوں سے ہے تو برہمن سے …

Read More »

ہم مشرق کے مسکينوں کا دل مغرب ميں جا اٹکا ہے

Ham Mashriq Kay Maskeenu Ka Dil Maghrib Main Ja Atka Hay

ہم مشرق کے مسکينوں کا دل مغرب ميں جا اٹکا ہے واں کنڑ سب بلوري ہيں ياں ايک پرانا مٹکا ہے اس دور ميں سب مٹ جائيں گے، ہاں! باقي وہ رہ جائے گا جو قائم اپني راہ پہ ہے اور پکا اپني ہٹ کا ہے اے شيخ و برہمن، …

Read More »

تہذيب کے مريض کو گولی سے فائدہ

Tahzeeb Ky Mareez Ko Goli Sa Faaida

تہذيب کے مريض کو گولي سے فائدہ دفع مرض کے واسطے پل پيش کيجيے تھے وہ بھي دن کہ خدمت استاد کے عوض دل چاہتا تھا ہديہء دل پيش کيجيے بدلا زمانہ ايسا کہ لڑکا پس از سبق کہتا ہے ماسٹر سے کہ ”بل پيش کيجيے  

Read More »

تعليم مغربی ہے بہت جرات آفريں

Taaleem Maghrebi Hay Bahot Jurrat Aafreen

تعليم مغربي ہے بہت جرات آفريں پہلا سبق ہے، بيٹھ کے کالج ميں مار ڈينگ بستے ہيں ہند ميں جو خريدار ہي فقط آغا بھي لے کے آتے ہيں اپنے وطن سے ہينگ ميرا يہ حال، لوٹ کي ٹو چاٹتا ہوں ميں ان کا يہ حکم، ديکھ! مرے فرش پر …

Read More »

طلوع اسلام

Dalal Subha Rooshan Hay Sitaroon Ki Tank Taabi

دليل صبح روشن ہے ستاروں کی تنک تابی افق سے آفتاب ابھرا ،گيا دور گراں خوابی عروق مردۂ مشرق ميں خون زندگی دوڑا سمجھ سکتے نہيں اس راز کو سينا و فارابی مسلماں کو مسلماں کر ديا طوفان مغرب نے تلاطم ہائے دريا ہی سے ہے گوہر کی سيرابی عطا …

Read More »

خضرراہ

Saahil Darya Ye Main Ik Raat Tha Mahw Nazar

شاعر ساحل دريا پہ ميں اک رات تھا محو نظر گوشہ دل ميں چھپائے اک جہان اضطراب شب سکوت افزا، ہوا آسودہ، دريا نرم سير تھی نظر حيراں کہ يہ دريا ہے يا تصوير آب جيسے گہوارے ميں سو جاتا ہے طفل شير خوار موج مضطر تھی کہيں گہرائيوں ميں …

Read More »

ہمايوں

Aay Hamayun! Zindagi Tere Sarapa Sooz The

مسٹر جسٹسں شاہ دين مرحوم اے ہمايوں! زندگی تيری سراپا سوز تھی تيری چنگاری چراغ انجمن افروز تھی گرچہ تھا تيرا تن خاکی نزار و دردمند تھی ستارے کی طرح روشن تری طبع بلند کس قدر بے باک دل اس ناتواں پيکر ميں تھا شعلہ گردوں نورد اک مشت خاکستر …

Read More »

دريوزہ خلافت

Agar Mulk Hatton Say Jata Hay, Ja'ay

اگر ملک ہاتھوں سے جاتا ہے، جائے تو احکام حق سے نہ کر بے وفائی نہيں تجھ کو تاريخ سے آگہی کيا خلافت کی کرنے لگا تو گدائی خريديں نہ جس کو ہم اپنے لہو سے مسلماں کو ہے ننگ وہ پادشائی ”مرا از شکستن چناں عار نايد کہ از …

Read More »

اسيری

Hay Aseeri Aetbar Afza Jo Ho Fitrat Buland

ہے اسيری اعتبار افزا جو ہو فطرت بلند قطرۂ نيساں ہے زندان صدف سے ارجمند مشک اذفر چيز کيا ہے ، اک لہو کی بوند ہے مشک بن جاتی ہے ہو کر نافہ آہو ميں بند ہر کسی کی تربيت کرتی نہيں قدرت، مگر کم ہيں وہ طائر کہ ہيں …

Read More »

ميں اورتو

Na Saleeqa Mjh Main Kaleem Ka Na Qareena Tujh Main Khaleel Ka

نہ سليقہ مجھ ميں کليم کا نہ قرينہ تجھ ميں خليل کا ميں ہلاک جادوئے سامری، تو قتيل شيوۂ آزری ميں نوائے سوختہ در گلو ، تو پريدہ رنگ، رميدہ بو ميں حکايت غم آرزو ، تو حديث ماتم دلبری مرا عيش غم ،مرا شہد سم ، مری بود ہم …

Read More »

شيکسپير

Shafq Subha Ko Darya Ka Khram Aaina

شفق صبح کو دريا کا خرام آئينہ نغمہ شام کو خاموشی شام آئينہ برگ گل آئنہ عارض زبيائے بہار شاہد مے کے ليے حجلہ جام آئينہ حسن آئنہ حق اور دل آئنہ حسن دل انساں کو ترا حسن کلام آئينہ ہے ترے فکر فلک رس سے کمال ہستی کيا تری …

Read More »

پھول

Tujhy Kiaon Fikar Hay Aay Gul Dil Sad Chak Bulbul Ki

تجھے کيوں فکر ہے اے گل دل صد چاک بلبل کی تو اپنے پيرہن کے چاک تو پہلے رفو کر لے تمنا آبرو کی ہو اگر گلزار ہستی ميں تو کانٹوں ميں الجھ کر زندگی کرنے کی خو کرلے صنوبر باغ ميں آزاد بھی ہے، پا بہ گل بھی ہے …

Read More »

پيوستہ رہ شجر سے ، اميد بہار رکھ

Mumkin Nahi Hari Ho Sahab e Bahar Say

ڈالی،   گئی جو فصلِ خَزاں ميں شجر سے ٹوٹ مُمکن نہيں ہری ہو سَحابِ بہار سے ہے لازوال عہدِ خَزاں اس کے واسطے کچھ واسطہ نہيں ہے اسے برگ و بار سے ہے تيرے گلستاں ميں بھی فصلِ خَزاں کا دور خالی  ہے  جيبِ گُل  زرِ  کامل  عيار  سے جو …

Read More »

مذ ہب

Apni Millat Par Qias Aqwam Maghrib Say Na Kar

اپنی ملت پر قياس اقوام مغرب سے نہ کر خاص ہے ترکيب ميں قوم رسول ہاشمی ان کی جمعيت کا ہے ملک و نسب پر انحصار قوت مذہب سے مستحکم ہے جمعيت تری دامن ديں ہاتھ سے چھوٹا تو جمعيت کہاں اور جمعيت ہوئی رخصت تو ملت بھی گئی

Read More »

جنگ ير موک کاايک واقعہ

Saf Basta Thy Arab Kay Jawanan e Taigh e Band

جنگ ِيرموک کاايک واقعہ صف بستہ تھے عرب کے جوانانِ تيغ بند تھی منتظر حِنا کی عروس ِ زمينِ  شام اک نوجوان صُورت سيماب مُضطرب آ کر  ہوا  اميرِ عساکر  سے  ہم کلام اے  بُوعبيدہ  رُخصت ِ پَيکار  دے  مجھے لبريز  ہو گيا  مرے  صبر و سکوں کا    جام بے …

Read More »

مذ ہب – تضمين بر شعر ميرزابيدل

Taaleem Peer Falsafa Maghrib Hay Ye

تضمين بر شعر ميرزابيدل تعليم پير فلسفۂ مغربی ہے يہ ناداں ہيں جن کو ہستی غائب کی ہے تلاش پيکر اگر نظر سے نہ ہو آشنا تو کيا ہے شيخ بھی مثال برہمن صنم تراش محسوس پر بنا ہے علوم جديد کی اس دور ميں ہے شيشہ عقائد کا پاش …

Read More »

فردوس ميں ايک مکالمہ

Hatif Nay Kaha Mjh Say Ka Firdoos Main Ik Rooz

ہاتِف نے کہا مجھ سے کہ فردوس ميں اک روز حالیؔ سے مخاطب ہوئے يوں سعدیِؔ  شيراز ٭   اے آنکہ ز نورِ  گہر نظم فلک تاب دامن بہ چراغ  مہ اختر  زدہ  ای باز! کچھ کيفيت مسلم ہندی تو بياں کر واماندۂ منزل ہے کہ مصروف تگ و تاز؟ مذہب …

Read More »