تہ دام بھي غزل آشنا رہے طائران چمن تو کيا

تہ دام بھي غزل آشنا رہے طائران چمن تو کيا
جو فغاں دلوں ميں تڑپ رہي تھي، نوائے زير لبي رہي
ترا جلوہ کچھ بھي تسلي دل ناصبور نہ کر سکا
وہ گريہ سحري رہا ، وہي آہ نيم شبي رہي
نہ خدا رہا نہ صنم رہے ، نہ رقيب دير حرم رہے
نہ رہي کہيں اسد اللہي، نہ کہيں ابولہبي رہي
مرا ساز اگرچہ ستم رسيدئہ زخمہ ہائے عجم رہا
وہ شہيد ذوق وفا ہوں ميں کہ نوا مري عربي رہي

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے