Home / علامہ اقبال شاعری / با نگ درا / بانگ درا (حصہ سوم) / با نگ درا - ظریفانہ - (حصہ سوم) / ہم مشرق کے مسکينوں کا دل مغرب ميں جا اٹکا ہے
Ham Mashriq Kay Maskeenu Ka Dil Maghrib Main Ja Atka Hay

ہم مشرق کے مسکينوں کا دل مغرب ميں جا اٹکا ہے

ہم مشرق کے مسکينوں کا دل مغرب ميں جا اٹکا ہے
واں کنڑ سب بلوري ہيں ياں ايک پرانا مٹکا ہے

اس دور ميں سب مٹ جائيں گے، ہاں! باقي وہ رہ جائے گا
جو قائم اپني راہ پہ ہے اور پکا اپني ہٹ کا ہے

اے شيخ و برہمن، سنتے ہو! کيا اہل بصيرت کہتے ہيں
گردوں نے کتني بلندي سے ان قوموں کو دے پٹکا ہے

يا باہم پيار کے جلسے تھے ، دستور محبت قائم تھا
يا بحث ميں اردو ہندي ہے يا قرباني يا جھٹکا ہے

———————-

Transliteration

Hum Mashriq Ke Maskeenon Ka Dil Maghrib Mein Ja Atka Hai
Waan Kantar Sub Ballori Hain Yaan Aik Purana Matka Hai

Iss Dour Mein Sub Mit Jaen Ge, Haan! Baqi Woh Rehjaye Ga
Jo Qaeem Apni Rah Pe Hai Aur Pakka Apni Hat Ka Hai

Ae Shiekh-o-Barhman, Sunte Ho! Kya Ahl-e-Basirat Kehte Hain
Gardoon Ne Kitni Bulandi Se In Qoumon Ko De Tapka Hai

Ya Baham Pyar Ke Jalse The, Dastoor-e-Mohabbat Qaeem Tha
Ya Behas Mein Urdu Hindi Hai Ya Qurbani Ya Jhatka Hai

———————

We poor Easterners have been entangled in the West
All crystal decanters are there, only an old earthen jar is here

All will be annihilated in this age except the one
Who established in his ways and firm in his thought is

O Shaikh and Brahman do you listen to what people with insight say?
Heaven from great heights has thrown down those nations

Who formerly had assemblies of affection with firm love
Now under discussion is Urdu and Hindi or Dhibh and Jhatka

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے