Home / علامہ اقبال شاعری / با نگ درا / بانگ درا (حصہ سوم) / با نگ درا - غز ليات - (حصہ سوم) / کبھی اے حقيقتِ منتظر نظر آ لِباس ِمجاز ميں
Kabi Aay Haqiqat e Mutazar Aa Libas e Majaz Main

کبھی اے حقيقتِ منتظر نظر آ لِباس ِمجاز ميں

کبھی اے حقيقتِ منتظر نظر آ لِباس ِمجاز ميں

کہ ہزاروں سجدے تڑپ رہے ہيں مری جبينِ نياز ميں

طَرَب آشنائے خروش ہو، تو  نوا ہے محرم گوش ہو

وہ سُرُود کيا کہ چھپا  ہوا  ہو سکوت پردۂ   ساز ميں

تو بچابچا کے نہ رکھ اسے،  ترا آئنہ ہے وہ آئنہ

کہ شِکَسْتَہ ہو تو عزيز تر ہے نگاہ آئنہ ساز ميں

دمِ طوف کِرمَکِ شمع نے يہ کہا کہ وہ اثرِکہن

نہ تری حکايت ِسوز ميں، نہ مری حديث ِگداز ميں

نہ کہيں جہاں ميں اماں ملی،  جو اماں ملی تو کہاں ملی

مرے جرم ِخانہ خراب کو ترے عفو بندہ نواز ميں

نہ وہ عشق ميں رہيں گرمياں، نہ وہ حسن ميں رہيں شوخياں

نہ وہ غزنوی ميں تڑپ رہی، نہ وہ خَم ہے زُلفِ اياز ميں

جو ميں سر بسجدہ ہوا کبھی تو  زميں سے آنے لگی صدا

ترا دل تو ہے صنم آشنا،  تجھے  کيا  ملے  گا  نماز  میں


حقيقتِ منتظر: حقیقت جس کا انتظار ہو، محبوب حقیقی  _   لِباس ِمجاز: یعنی جسم والا وجود  _   تڑپ رہے: بے چین ہیں _  جبينِ نياز: عاجزی اور انکساری والی پیشانی _ طَرَب آشنائے خروش: یعنی جزبہ عشق کی دھوم مچا دینے کے لطف سے آگاہ  _ طرب: خوشی، نشاط، لطف _  خروش: زور کی آواز، شور، غل  _  نوا: گیت، نغمہ _  محرم گوش: کانوں سے واقف، یعنی سنے جانے والا _  سُرُود:  گیت، نغمہ _ سکوت: خاموشی _  پردۂ  ساز: باجے کی لے، ساز  _  آئنہ : دل  _   شِکَسْتَہ ہونا: یعنی عشق کی چوٹ کھانے کی حالت _  نگاہ: نظر _ آئنہ ساز: آئنہ بنانے والا، مراد خدا _ دمِ: وقت  _  طوف: طواف _  کِرمَکِ شمع: شمع کا کیڑا، پروانہ، پتنگا _   اثرِکہن: پرانا اثر _  حکايت ِسوز: جلنے کی داستان؛ جلنے کی کیفیت _ حديث ِگداز: پگھلنے کی بات  _   جرم ِخانہ خراب: گھر کو اجاڑ دینے والے گناہ _ عفو بندہ نواز: ایسی معافی جو بندوں پر مہربانی کرنے والی ہے _  گرمياں: تپش، حرارت، محبت کا جزبہ _  شوخياں: ادائیں، ناز و انداز _  غزنوی: مشہور بادشاہ محمود غزنوی جو اپنے غلام ایاز سے بہت محبت کرتا تھا، مراد عاشقی _  خَم: بل _  زُلفِ اياز: ایاز کی زلف _ سر بسجدہ: سر کا سجدہ کی حالت میں ہونا _  صدا: آواز  _  صنم آشنا: بتوں کا عاشق

——————

Transliteration

Kabhi Ae Haqiqat-e-Muntazir! Nazar Aa Libas-e-Majaz Mein
Ke Hazar Sajde Tarap Rahe Hain Meri Jabeen-e-Niaz Mein

Tarb Ashnaye Kharosh Ho, Tu Nawa Hai Mehram-e-Gosh Ho
Woh Surood Kya Ke Chupa Huwa Ho Sakoot-e-Parda-e-Saaz Mein

Tu Bacha Bacha Ke Na Rakh Isse, Tera Aaeena Hai Woh Aaeena
Ke Shikast Ho To Aziz Tar Hai Nigah-e-Aaeena Saaz Mein

Dam-e-Tof Karmak-e-Shama Ne Ye Kaha Ke Woh Asar-e-Kuhan
Na Teri Hikayat-e-Souz Mein, Na Meri Hadees-e-Gudaz Mein

Na Kaheen Jahan Mein Aman Mili, Jo Aman Mili To Kahan Mili
Mere Jurm-e-Khana Kharab Ko Tere Ufuw-e-Banda Nawaz Mein

Na Woh Ishq Mein Raheen Garmiyaan, Na Woh Husn Mein Raheen Shaukiyan
Na Woh Ghaznavi Mein Tarap Rahi, Na Kham Hai Zulf-e-Ayaz Mein

Jo Mein Sar Basajda Huwa Kabhi To Zameen Se Ane Lagi Sada
Tera Dil To Hai Sanam Ashna, Tujhe Kya Mile Ga Namaz Mein

———————

For once, O awaited Reality, reveal Yourself in a form material,
For a thousand prostrations are quivering eagerly in my submissive brow.

Know the pleasure of tumult: thou art a tune consort with the ear!
What is that melody worth, which hides itself in the silent chords of the harp.

Do not try to protect them, your mirror is the mirror
Which would be dearer in the Maker’s eye if they broken are

During circumambulation the moth exclaimed, “Those past effects
Neither in your story of pathos, nor in my tale of love are”

My dark misdeeds found no refuge in the wide world—
The only refuge they found was in Your Gracious Forgiveness

Neither love has that warmth, nor beauty has that humour
Neither that restlessness in Ghaznavi nor those curls in the hair locks of Ayaz are,

Even as I laid down my head in prostration a cry arose from the ground:
Your heart is in materialism, no rewards for your prayers are.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے