Home / علامہ اقبال شاعری / با نگ درا / بانگ درا (حصہ سوم) / پيوستہ رہ شجر سے ، اميد بہار رکھ
Mumkin Nahi Hari Ho Sahab e Bahar Say

پيوستہ رہ شجر سے ، اميد بہار رکھ

ڈالی،   گئی جو فصلِ خَزاں ميں شجر سے ٹوٹ
مُمکن نہيں ہری ہو سَحابِ بہار سے
ہے لازوال عہدِ خَزاں اس کے واسطے
کچھ واسطہ نہيں ہے اسے برگ و بار سے
ہے تيرے گلستاں ميں بھی فصلِ خَزاں کا دور
خالی  ہے  جيبِ گُل  زرِ  کامل  عيار  سے
جو نغمہ زن تھے خَلوَتِ  اوراق  ميں  طيور
رُخصت ہوئے ترے شجرِ  سايہ دار سے
شاخ  بُريدہ  سے سبق  اندوز  ہو  کہ  تو
نا آشنا  ہے  قاعدئہ  روزگار  سے

مِلّت  کے  ساتھ  رابطۂ  ا ُستوار  رکھ
!پيوستہ  رہ  شجر  سے ،  اُميدِ  بہار  رکھ


پیوستہ رہنا: وابستہ یا ساتھ ملے رہنا۔  شجر: درخت، مراد قوم۔  ڈالی: ٹہنی۔  فصل: موسم۔  ہری ہونا: تر و تازہ/ سر سبز ہونا ۔ سحاب: بادل۔  بہار: موسم بہار۔ لازوال: ختم نہ ہونے والا۔ عہد: زمانہ،  موسم۔ برگ و بار: پتے اور پھل، سر سبزی۔  جیب گل: پھول کی تھیلی، مراد مسلمان۔  زرکامل عیار: کسوٹی پر پورا اترنے والا، خالص سونا، مراد ایمان۔ نغمہ زن: چہچہانے والے۔ طیور: جمع طائر، پرندے، یعنی وہ پرانے مسلمان جو اپنے جذبوں اور عمل سے باغ اسلام کی رونق کا باعث تھے۔ شجر سایہ دار: گھنے پتوں کے سبب سایہ رکھنے والا درخت، مراد ملت، قوم۔ شاخ بریدہ: درخت کی کٹی ہوئی ٹہنی، مراد قوم سے کٹا ہوا فرد۔ سبق اندوز: سبق اندوز: سبق/ عبرت حاصل کرنے والا۔ نا آشنا: بے خبر، نا واقف۔  قاعدئہ  روزگار: زمانہ کا دستور/ طور طریقہ۔  رابطۂ  ا ُستوار: مضبوط تعلق۔ شجر: مراد قوم


Transliteration

Pewasta Re Shajar Se, Umeed-e-Bahar Rakh

Dali Gyi Jo Fasal-e-Khazan Mein Shajar Se Toot
Mumkin Nahin Hari Ho Sahab-e-Bahar Se

Hai La-Zawal Ehd-e-Khazan Uss Ke Waste
Kuch Wasta Naahin Hai Usse Barg-o-Baar Se

Hai Tere Gulistan Mein Bhi Fasal-e-Khazan Ka Dour
Khali Hai Jaib-e-Gul Zr-e-Kamil Ayaar Se

Jo Naghma Zan Thay Khalwat-e-Auraq Mein Tayoor
Rukhsat Huway Tere Shajar-e-Sayadar Se

Shakh-e-Bureeda Se Sabaq Andoz Ho Ke Tu
Na Ashna Hai Qaida’ay Rozgar Se

Millat Ke Sath Rabta Ustawar Rakh
Pewasta Reh Shajar Se, Umeed-e-Bahar Rakh!

———————-

Remain Attached To The Tree Keep Spring’s Expectation

The branch of the tree which got separated in autumn
Is not possible to green up with the cloud of spring

The autumn season for this branch is everlasting
It has no connection with flourishing in the spring

Autumn season prevails in your rose garden also
The pocket of the rose is devoid of good cash

The birds which were singing in the seclusion of leaves
Have departed from your shady tree’s leaves\

You should learn a lesson from the separated branch
As you are unacquainted with the customs of the world

Keep very strong communication with the nation
Remain attached to the tree and have spring’s expectation!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے