Dekhiay Chalti Hay Mashriq Ki Tijarat Kab Tak

ديکھیے چلتی ہے مشرق کی تجارت کب تک

ديکھیے چلتی ہے مشرق کی تجارت کب تک
شيشہ ديں کے عوض جام و سبو ليتا ہے
ہے مداوائے جنون نشتر تعليم جديد
ميرا سرجن رگ ملت سے لہو ليتا ہے

——————

Transliteration

Dekhiye Chalti Hai Mashriq Ki Tijarat Kab Tak
Shisha-e-Deen Ke Ewz Jaam-o-Saboo Leta Hai

Hai Madawaye Junoon Nashtar-e-Taleem-e-Jadeed
Mera Sarjan Rag-e-Millat Se Lahoo Leta Hai

—————–

Let us see how long this business of the East lasts
People are buying cups and jars instead of din’s goblets

The cure of Love is the new education’s lancet
My surgeon is drawing blood from the Millat’s vein

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے