Hatif Nay Kaha Mjh Say Ka Firdoos Main Ik Rooz

فردوس ميں ايک مکالمہ

ہاتِف نے کہا مجھ سے کہ فردوس ميں اک روز
حالیؔ سے مخاطب ہوئے يوں سعدیِؔ  شيراز
٭   اے آنکہ ز نورِ  گہر نظم فلک تاب
دامن بہ چراغ  مہ اختر  زدہ  ای باز!
کچھ کيفيت مسلم ہندی تو بياں کر
واماندۂ منزل ہے کہ مصروف تگ و تاز؟
مذہب کی حَرَارت بھی ہے کچھ اس کی رگوں ميں؟
تھی جس کی فلک سوز کبھی گرمیِ آواز؟
باتوں سے ہوا شَيخ کی  حالیؔ   متاثر
رو  رو  کے لگا کہنے کہ ”اے صاحبِ  اعجاز
جب  پير فلک نے وَرَق  ايام  کا  الٹا
آئی يہ صدا ،  پاؤ گے تعليم سے اعزاز
آيا ہے مگر اس سے عقيدوں ميں تَزَلزُل
دنيا تو ملی،  طائرِ  ديں کر گیا  پرواز
ديں ہو تو مقاصد ميں بھی  پيدا  ہو  بلندی
فطرت ہے جوانوں کی زميں گير زميں تاز
مذہب سے ہم آہنگی ِ افراد ہے باقی
ديں زَخمَہ ہے ، جمعيت ِملّت ہے اگر ساز
بنياد  لرز  جائے  جو  ديوارِ  چمن کی
ظاہر ہے کہ انجامِ گلستاں کا ہے آغاز
پانی نہ مِلا  زمزم ِ ملّت سے جو اس کو
پيدا ہيں نئی پَود ميں اِلحاد کے انداز
يہ ذکر حضورِ  شہِ  يثربؐ ميں نہ کرنا
سمجھیں  نہ کہيں ہند کے مسلم مجھے غَماز

٭٭ “خُرما  نتواں  يافت  ازاں  خار  کہ  کشتيم
ديبا  نتواں  بافت  ازاں  پشم  کہ  رشتيم


مکالمہ: باہم گفتگو، بات چیت کرنا۔  ہاتِف: غیب کا فرشتہ، غیبی آواز۔   حالی: اردو کے مشہور شاعر اور غالب کے شاگرد خاص۔ مخاطب ہونا: بات کرتے وقت دوسرے کو متوجہ کرنا۔  سعدی ؔ شیرازی: فارسی کے مشہور شاعر، بوستان اور گلستان جیسی بین الاقوامی شہرت یافتہ کتابوں کے مصنف کا نام شرف الدین، لقب مصلح، تخلص سعدی، شیراز میں ولادت ۱۱۹۳ء میں ہوئی ۔ مدرسئہ نظامیہ بغداد میں تعلیم پائی۔  ۳۰ برس سےزیادہ کا عرصہ سفر و سیاحت میں گزارا۔ وفات ۱۲۹۱ء بمقام شیراز۔ آپ کا مدفن “سعدیہ” کہلاتا ہے۔ کیفیت: حالت، صورت حال۔ مسلم ہندی: ہندوستان کے مسلمان۔  بیان کر: بتا۔   واماندۂ منزل: منزل سے پیچھے رہا ہوا۔  مصروف تگ و تاز: بھاگ دوڑ یعنی جدوجہد میں لگا ہوا۔ مذہب کی حرارت: اسلام کا پر جوش جزبہ۔  فلک سوز: آسمان کو جلانے والی۔  گرمی آواز: آواز میں ایسی حرارت جو دلوں کو پگھلا دے۔  شیخ: مراد شیخ سعدی۔  صاحب اعجاز: معجزے دھکانے والا، مراد ایسا شاعر جس کا کلام کرامت کی طرح ہے۔  پیر فلک: آسمان کا بوڑھا۔ ورق ایام کا الٹا: زمانے کے ورق الٹے، یعنی جب زمانہ بدلا۔  صدا:آواز۔  اعزاز: عزت، شان۔  عقیدہ: مذہبی خیال/ اعتقاد۔  تزلزل: مراد تبدیلی، انقلاب۔  طائرِ  ديں کر گیا  پرواز: مراد دین سے محبت ختم ہو گئی۔ زمین گیر: زمین پکڑنے والی، پست۔  زمیں تار: یعنی صرف دنیا کے مادی فوائد حاصل کرنے کے لیے کوشش کرنے والے۔  ہم آہنگی افراد: اہل قوم کا آپس میں خیالات کا اتفاق۔  زخمہ: لوہے کا چھلا جس سے ساز بجایا جاتا ہے۔  جمعیت ملت: قوم کا جماعت کی شکل میں ہونا۔  لرزنا: ہلنا۔  انجام: اخیر۔  زمزم: آب زمزم کا چشمہ۔  زمزمِلت: مراد قوم کے علماء کی طرف سے صحیح راہنمائی۔ الحاد: اللہ کے وجود سےانکار۔  ذکر:بات۔ حضور: خدمت میں۔  شہِ یثربؐ: یعنی حضور اکرم ﷺ۔ غماز: چغلی کھانے والا

٭  اے وہ شخص (حالی) تو نے آسمان کو چمکانے والی اپنی شاعری کے موتی کی روشنی سے چاند اور ستاروں کا چراغ بجھا دیا ہے۔

٭٭  جو کانٹا ہم نے بویا ہے اس سے کھجور کا پھل حاصل نہیں کیا جا سکتا، اس اون سے جو ہم نے کاتی ہے، ریشم نہیں بنا جا سکتا- (سعدی کا شعر ہے)


Transliteration

Firdous Mein Aik Muqalma

Hatif Ne Kaha Mujh Se Ka Firdous Mein Ek Roz
Haali Se Mukhatib Huwe Yun Saadi-e-Sheeraz

Ae Ankah Za-Noor-e-Guhar-e-Nazam-e-Falak Taab
Daman Ba Charagh-e-Mah-o-Akhtar Zada Aee Baaz!

Kuch Kaifiat-e-Muslim-e-Hindi To Bayan Kar
Wa Mandah-e-Manzil Hai Ke Masroof-e-Tag-o-Taaz

Mazhab Ki Hararat Bhi Hai Kuch Iss Ki Ragon Mein?
Thi Jis Ki Falak Souz Kabhi Garmi-e-Awaz

Baaton Se Huwa Sheikh Ki Haali Mutasir
Ro Ro Ke Laga Kehne K “Ae Sahib-e-Ijaz

Jab Peer-e-Falak Ne Waraq-e-Ayyam Ka Ulta
Ayi Ye Sada, Pao Ge Taleem Se Azaaz

Aya Hai Magar Iss Se Aqeedaton Mein Tazalzal
Dunya To Mili, Taeer-e-Deen Kar Gya Parwaz

Deen Ho To Maqasid Mein Bhi Paida Ho Bulandi
Fitrat Hai Jawanon Ki Zameen-Geer, Zameen Taza

Mazhab Se Hum Ahangi-e-Afrad Hai Baqi
Deen Zakhma Hai, Jamiat-e-Millat Hai Agar Saaz

Bunyad Laraz Jaye Jo Deewar-e-Chaman Ki
Zahir Hai Ke Anjaam-e-Gulistan Ka Hai Aghaz

Pani Na Mila Zamzam-e-Millat Se Jo Iss Ko
Paida Hain Nayi Poud Mein Ilhaad Ke Andaz

Ye Zikr Huzoor-e-Shah-e-Yasrab (S.A.W.) Mein Na Karna
Samjhain Na Kahin Hind Ke Muslim Mujhe Ghammaz

‘Khurma Natawan Yafat Azan Khar Ke Kashteeam
Deeba Natawan Bafat Azan Pashem Ke Rashteeam”
(Saadi)

——————–

A Conversation In Paradise

Hatif said to me that in Paradise one day
Sa’di of Shiraz addressed Hali in this way

“O with the pearl of whose poetry’s sky-illuminating light
The falcon became companion of moon and stars’ light!

Relate to me what the story of the Indian Muslim is
Is he lagging at the halt or busy in exertion is?

Is some warmth of din left in his veins?
The heat of whose call was once burning the sky”

Hali was moved by the talk of the Shaikh
He started weeping and saying, “O man of miracles!

When the sky turned over the leaf of time
The call came that respect was possible only with education!

But this has produced wavering in fundamental beliefs
Secular benefits were obtained, but din had been undermined

Goals also become exalted if the din is preserved
The youth’s nature is paralyzed and very low keyed

Concordance among individuals is kept only with din
Din is the plectrum if national congregation is the musical instrument

If the foundation of the garden’s wall is shaken
It is clearly the beginning of the garden’s end

As the water of Zamzam was not available to it
Some manner of atheism is appearing in the new progeny

Do not talk of this in the audience of the Lord of Yathrib
Lest Muslims of India consider that this is my back‐biting”

Dates cannot be obtained from the weeds we have sown
Brocade cannot be obtained from the wool we have spun”

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے