Pardah Chahry Say Otha, Anjuman Arai Kr

پردہ چہرے سے اُٹھا ، انجمن آرائی کر

پردہ چہرے سے اُٹھا ، انجمن آرائی کر

چشمِ مَہْر و مَہ و انجم کو تماشائی کر

تو جو بجلی ہے تو يہ چَشمک ِپنہاں کب تک

بے حِجابانہ مرے دل سے شناسائی کر

نَفَسِ گرم کی تاثير ہے اعجازِ حيات

 تيرے سينے ميں اگر ہے تو مسيحائی کر

کب تلک طور پہ دَریوزَہ گَری مِثلِ کليم

اپنی ہستی سے عياں شعلہِ سينائی کر

ہو تری خاک کے ہر ذرے سے تعمير ِحرم

دل کو بيگانہِ انداز کليسائی کر

اس گلستاں ميں نہيں حد سے گزرنا اچھا

ناز بھی کر تو بہ اندازہِ  رعنائی کر

پہلے خوددار تو مانندِ سکندر ہو لے

پھر جہاں ميں ہوس ِشوکت ِدارائی کر

مل ہی جائے گی کبھی منزل ليلی اقبال

کوئی دن اور ابھی باديہ پيمائی کر


پردہ چہرے سے اُٹھا: اے محبوب اپنا دیدار کروا _ انجمن آرائی کر: پردہ سے باہر نکل کر سامنے آ  _  چشمِ: آنکھ  _  مَہْر: سورج _  مہ: ماہ، چاند  _ انجم: ستارے  _  تماشائی کر: دیکھنے والا بنا  _   چشمک پنہاں کنکھیوں سے نظر چرا کر دیکھنا  _ بے حجابانہ: پردہ اٹھا کر _  شناسائی: دوستی، واقفیت  _  نفس گرم: گرم سانس، عشق کی تپش  _  اعجاز حيات: زندہ کرنے کا معجزہ _  مسيحائی کر: مردوں کو زندہ کرنے کا عمل  _   طور: وادی ایمن کا پہاڑ، کوہ طور _ دريوزہ گری: بھیک مانگنے کی کیفیت _  مثل کليم: حضرت مسا کی طرح  _   ہستی: وجود _  عياں: ظاہر  _  شعلہ سينائی: وہ روشنی جو حضرت مسا کو کوہ طور پر نظر آی _ خاک کے ہر ذرے: یعنی جسم کا رواں رواں _  تعمير حرم: یعنی اسلامی کی حقیقی روح کا زدندہ ہونا _ بيگانہ: اجنبی _ کليسائی : غیر اسلامی اطوار _ ناز: ادا، غمزہ _  بہ اندازہِ رعنائی: حسن و جمال جتنا _  سکندر: سکندر رومی، کہا جاتا ہے کہ سکندر نی ایک وقت میں حضرت خضر سے کہ دیا تھا کہ آب حیات کے ڈھونڈنے میں اسے حضرت خضر کی ضرورت نہیں/ نہ کرنا بھی خودی کا ایک بہت بڑا سنگ میل ہے  _  شوکت دارائی: ایران کے قدیم بادشاہ دارا کی سی شان و شوکت _  منزل ليلی : محبوب کا ٹھکانہ _  باديہ پيمائی: محبوب کی تلاش میں جنگلوں بیابانوں میں پھرنا / مزید تگ و دو کرنا

———————–

Transliteration 

Parda Chehre Se Utha, Anjum Arayi Kar
Chashm-e-Meher-o-Mah-o-Anjum Ko Tamashayi Kar

Tu Jo Bijli Hai To Ye Chashmak-e-Pinhan Kab Tak
Be-Hijabana Mere Dil Se Shanasayi Kar

Nafas-e-Garam Ki Taseer Hai Ijaz-e-Hayat
Tere Seene Mein Agar Hai To Masihayi Kar

Kab Talak Toor Pe Daryooza Gari Misl-e-Kaleem
Apni Hasti Se Ayan Shuala’ay Seenayi Kar

Ho Teri Khak Ke Har Zarre Se Tameer-e-Haram
Dil Ko Baigana’ay Andaz-e-Kalisayi Kar

Iss Gulistan Mein Nahin Had Se Guzarna Acha
Naz Bhi Kar To Ba Andaza-e-Raanayi Kar

Pehle Khud-Dar To Manind-e-Sikandar Ho Le
Phir Jahan Mein Hawas-e-Shoukat-e-Darayi Kar

Mil Hi Jaye Gi Kabhi Manzil-e-Laila Iqbal !
Koi Din Aur Abhi Baad Ye Pemayi Kar

———————

Lift the veil from thy Face and be manifest in the assembly
Make the eyes of the sun, moon and stars thy spectators

If thou art the lightning how long this secret winking?
Make acquaintance with my heart without a veil.

The warm breath’s effect is the miracle of life
If it is on thy breast perform life‐giving miracles

How long should begging be on the Tur like Kaleem!
Make the flame of Sinai manifest with thy existence

Let the Harem be built with every speck of thy dust
Make the heart alien to the ways of the Church

It is not good to exceed limits in this garden
If thou showeth elegance make its show with grace

First become self‐respecting like Alexander.
Then make the show of desire of Dara’s grandeur

You will reach the destination of Layla one day, O Iqbal
For some more days continue wandering in the wilderness

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے