Saf Basta Thy Arab Kay Jawanan e Taigh e Band

جنگ ير موک کاايک واقعہ

جنگ ِيرموک کاايک واقعہ

صف بستہ تھے عرب کے جوانانِ تيغ بند
تھی منتظر حِنا کی عروس ِ زمينِ  شام
اک نوجوان صُورت سيماب مُضطرب
آ کر  ہوا  اميرِ عساکر  سے  ہم کلام
اے  بُوعبيدہ  رُخصت ِ پَيکار  دے  مجھے
لبريز  ہو گيا  مرے  صبر و سکوں کا    جام
بے تاب ہو رہا ہوں فِراق رسُولؐ  ميں
اک دم کی زندگی بھی مَحَبت ميں ہے حرام
جاتا ہوں مَيں حضور ِ رسالت پناہؐ   ميں
لے جاؤں گا خوشی سے اگر ہو کوئی  پيام
يہ ذوق و شوق  ديکھ  کے  پُرنَم  ہوئی  وہ  آنکھ
جس کی نِگاہ تھی صِفَت ِ تيغِ  بے نيام
بولا امير فوج کہ ”وہ  نوجواں  ہے  تو
پِيروں پہ تيرے عشق کا  واجِب ہے احترام
پوری کرے خدائے محمدؐ  تری مراد
کتنا بلند تيری مَحَبت کا ہے مقام
پہنچے جو بارگاہِ  رسول ِ اميں ؐ ميں تو
کرنا يہ عرض ميری طرف سے  پس از سلام

ہم پہ کرم کِيا ہے خدائے غيور نے
پورے ہوئے جو وعدے کيے تھے حضور نے”


جنگ یرموک: یرموک، دمشق کے قریب ایک میدان کا نام ہے جس میں ۱۳ھ  میں مسلمانوں اور رومیوں کے درمیان جنگ ہوئی۔ اسلامی فوج ۲۰ ہزار، سپہ سالار حضرت ابو عبیدہؓ جب کے رومی فوج دس ہزار تھی۔ مسلمانوں کو فتح حاصل ہوئی۔

بوعبیدہؓ: حضرت ابو عبیدہؓ۔ اسلامی فوج کے سپہ سالار، عامر نام، ابو عبیدہ کنیت، امین الامت لقب، حضرت ابو بکرؓ کی دعوت پر اسلام قبول کیا، صحابی تھے، مختلف جنگوں میں شریک ہوۓاور فتح پائی۔ ۱۸ھ میں ملک شام میں طاعون کی وبا پھیلی جس میں بعمر ۵۸ برس، بمقام جابیہ فوت ہوئے۔

رخصت پیکار: لڑنے کی اجازت۔  لبریز ہونا: بھر جانا۔ جام: پیالہ۔  فراق: دوری۔  دم: پَل، گھڑی، لمحہ۔  حرام: مراد بے مزہ۔   حضور ِ رسالت پناہؐ: حضور اکرم ؐ کی خدمت اقدس میں۔  ذوق و شوق: جزبہ جہاد۔  پُرنم ہونا: آنسو آنا۔  تیغِ بے نیام:  ننگی تلوار، کاٹ ڈالنے والی تلوار۔ پیروں: جمع پیر، بوڑھے، بڑی عمر کے، بزرگوں۔  عشق: حضور اکرمؐ سے محبت اور جہاد کا جزبہ۔  مُراد: آرزو، خواہش۔  بارگاہ: دربار۔ رسول امینؐ: حضور اکرمؐ جنہیں امین کہا جاتا ہے۔ پس از سلام: سلام کے بعد۔غیور: غیرت مند


Transliteration

Jang-e-Yarmook Ka Aik Waqia

Saf Basta The Arab Ke Jawanan-e-Taeghband
Thi Muntazir Hina Ki Uroos-e-Zameen-e-Shaam

Ek Naujawan Soorat-e-Seemab Muztarib
Aa Kar Huwa Ameer-e-Asakar Se Hum Kalam

Ae Bu-Ubaidah (R.A.) Rukhsat-e-Paikaar De Mujhe
Labraiz Ho Gya Mere Sabr-o-Sakoon Ka Jaam

Be Taab Ho Raha Hun Mein Firaaq-e-Rasool (S.A.W.) Mein
Ek Dam Ki Zindagi Bhi Mohabbat Mein Hai Haraam

Jata Hun Mein Huzoor-e-Risalat Panah (S.A.W.) Mein
Le Jaun Ga Khushi Se Agar Ho Koi Peyam

Ye Zauq-o-Shauq Dekh Kar Purnam Huwi Woh Ankh
Jis Ki Nigah Thi Safat-e-Taegh-e-Benayam

Bola Ameer-e-Fouj Ke “Woh Naujawan Hai Tu
Peeron Pet Ere Ishq Ka Wajib Hai Ehtaram

Pure Kare Khuda’ay Muhammad (S.A.W.) Teri Murad
Kitna Buland Teri Mohabbat Ka Hai Maqam!

Pohanche Jo Bargah-e-Rasool-e-Ameen (S.A.W.) Mein Tu
Karna Ye Arz Meri Taraf Se Pas Az Salam

Hum Par Karam Kiya Hai Khuda’ay Ghayoor Ne
Puray Huwe Jo Wade Kiye The Huzoor (S.A.W.) Ne”

———————–

An Incident Of The Battle Of Yarmuk

The armed Arab youth were arrayed for battle
The bride of Syria’s land was waiting for myrtle

A young man who was restless like mercury
Approaching the army’s general started saying

“O Abu ‘Ubaidah grant me permission to fight
The cup of my patience and calm is full

I am becoming impatient in the Holy Prophet’s separation
In his Love even a moment’s life has become hard

As I am going to the Holy Prophet’s audience
I shall gladly convey if there is any message”

The general’s eye, whose sight was like an unsheathed sword,
Noticing this zeal and fervor was moist with tears

The army’s general exclaimed., “You are that young man
The respect for whose Love is binding on the elders

May the God of Muhammad fulfill your wish
How elegant is the stage of your Love!

When you arrive in the audience of the Holy Prophet

Present this petition with my sincere compliments

“The Exalted God has shown His Mercy to us
Have been fulfilled all the promises You had made to us.”

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے