ضرب کلیم

ضرب کلیم Archives – Urdu Poetry Library

عورت

Johar Mard e Ayan Hota Hy By Mannat Gayer

جوہر مرد عياں ہوتا ہے بے منت غير غير کے ہاتھ ميں ہے جوہر عورت کي نمود راز ہے اس کے تپ غم کا يہي نکتہ شوق آتشيں ، لذت تخليق سے ہے اس کا وجود کھلتے جاتے ہيں اسي آگ سے اسرار حيات گرم اسي آگ سے ہے معرکہ …

Read More »

عورت اور تعليم

Tahzeeb e frangi Hy Agar Marg e Amomat

تہذيب فرنگي ہے اگر مرگ امومت ہے حضرت انساں کے ليے اس کا ثمر موت جس علم کي تاثير سے زن ہوتي ہے نا زن کہتے ہيں اسي علم کو ارباب نظر موت بيگانہ رہے ديں سے اگر مدرسہ زن ہے عشق و محبت کے ليے علم و ہنر موت …

Read More »

عورت کي حفاظت

Ek Zinda Haqeeqat Mere Seny Mein Hy Mastoor

اک زندہ حقيقت مرے سينے ميں ہے مستور کيا سمجھے گا وہ جس کي رگوں ميں ہے لہو سرد نے پردہ ، نہ تعليم ، نئي ہو کہ پراني نسوانيت زن کا نگہباں ہے فقط مرد جس قوم نے اس زندہ حقيقت کو نہ پايا اس قوم کا خورشيد بہت …

Read More »

آزادی نسواں

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ زہر ہے ، وہ قند کيا فائدہ ، کچھ کہہ کے بنوں اور بھي معتوب پہلے ہي خفا مجھ سے ہيں تہذيب کے فرزند اس راز کو عورت کي بصيرت ہي کرے فاش مجبور ہيں …

Read More »

عورت

Wajud e Zan Se Hy Tasveer Kainat Mein Rang

وجود زن سے ہے تصوير کائنات ميں رنگ اسي کے ساز سے ہے زندگي کا سوز دروں شرف ميں بڑھ کے ثريا سے مشت خاک اس کي کہ ہر شرف ہے اسي درج کا در مکنوں مکالمات فلاطوں نہ لکھ سکي ، ليکن اسي کے شعلے سے ٹوٹا شرار افلاطوں …

Read More »

خلوت

Ruswa Kia Is Door Ko Jalwat Ki Hawas Ne

رسوا کيا اس دور کو جلوت کي ہوس نے روشن ہے نگہ ، آئنہ دل ہے مکدر بڑھ جاتا ہے جب ذوق نظر اپني حدوں سے ہو جاتے ہيں افکار پراگندہ و ابتر آغوش صدف جس کے نصيبوں ميں نہيں ہے وہ قطرہ نيساں کبھي بنتا نہيں گوہر خلوت ميں …

Read More »

پردہ

Bahot Rang Badly Sapahr Bareen Nay

بہت رنگ بدلے سپہر بريں نے خدايا يہ دنيا جہاں تھي ، وہيں ہے تفاوت نہ ديکھا زن و شو ميں ميں نے وہ خلوت نشيں ہے ، يہ خلوت نشيں ہے ابھي تک ہے پردے ميں اولاد آدم کسي کي خودي آشکارا نہيں ہے  

Read More »

مرد فرنگ

Hzar Baar Hakeemu Nay Isko Sulghaya

ھزار بار حکیموں نے اس کو سلجھایا مگر یہ مسلہ زن رھا وہیں کا وہیں قصور زن کا نہیں ہے کچھ اس خرابی میں گواہ اس کی شرافت پہ ہیں مہ و پرویں فساد کا ہے فرنگی معاشرت میں ظہور کہ مرد سادہ ہے بیچارہ زن شناس نہیں

Read More »

ابليس کي مجلس شوري 1936ء

Ye Anasir Ka Purana Khail, Ye Dunya-e-Doon

(Armaghan-e-Hijaz-01) Iblees Ki Majlis-e-Shura (ابلیس کی مجلس شوری) The Devil’s Conference ابليس يہ عناصر کا پرانا کھيل، يہ دنيائے دوں ساکنان عرش اعظم کي تمناؤں کا خوں! اس کي بربادي پہ آج آمادہ ہے وہ کارساز جس نے اس کا نام رکھا تھا جہان کاف و نوں ميں نے دکھلايا …

Read More »

فطرت کے مقاصد کي کرتا ہے نگہباني

Ya Bnda e Sehraii Ya Mrd e Kuhastaani

يا بندہ صحرائي يا مرد کہستاني دنيا ميں محاسب ہے تہذيب فسوں گر کا ہے اس کي فقيري ميں سرمايہ سلطاني يہ حسن و لطافت کيوں ؟ وہ قوت و شوکت کيوں بلبل چمنستاني ، شہباز بياباني اے شيخ ! بہت اچھي مکتب کي فضا ، ليکن بنتي ہے بياباں …

Read More »

نگاہ وہ نہيں جو سرخ و زرد پہچانے

Nigah Wo Nahi Jo Surakh o Zard Pechany

نگاہ وہ نہيں جو سرخ و زرد پہچانے نگاہ وہ ہے کہ محتاج مہر و ماہ نہيں فرنگ سے بہت آگے ہے منزل مومن قدم اٹھا! يہ مقام انتہائے راہ نہيں کھلے ہيں سب کے ليے غربيوں کے ميخانے علوم تازہ کي سرمستياں گناہ نہيں اسي سرور ميں پوشيدہ موت …

Read More »

يہ نکتہ خوب کہا شير شاہ سوري نے

Ye Nukta Khoob Kha Sheer Shah Soori Ny

يہ نکتہ خوب کہا شير شاہ سوري نے کہ امتياز قبائل تمام تر خواري عزيز ہے انھيں نام وزيري و محسود ابھي يہ خلعت افغانيت سے ہيں عاري ہزار پارہ ہے کہسار کي مسلماني کہ ہر قبيلہ ہے اپنے بتوں کا زناري وہي حرم ہے ، وہي اعتبار لات و …

Read More »

آگ اس کي پھونک ديتي ہے برنا و پير کو

Aag Iski Phoonk Dyti Hay Brna Wa Peer Ko

آگ اس کي پھونک ديتي ہے برنا و پير کو لاکھوں ميں ايک بھي ہو اگر صاحب يقيں ہوتا ہے کوہ و دشت ميں پيدا کبھي کبھي وہ مرد جس کا فقر خزف کو کرے نگيں تو اپني سرنوشت اب اپنے قلم سے لکھ خالي رکھي ہے خامہ حق نے …

Read More »

قوموں کے ليے موت ہے مرکز سے جدائی

Qoumun K leay Moot Hay Markaz Say Judaai

قوموں کے ليے موت ہے مرکز سے جدائي ہو صاحب مرکز تو خودي کيا ہے ، خدائي جو فقر ہوا تلخي دوراں کا گلہ مند اس فقر ميں باقي ہے ابھي بوئے گدائي اس دور ميں بھي مرد خدا کو ہے ميسر جو معجزہ پربت کو بنا سکتا ہے رائي …

Read More »

آدم کا ضمير اس کي حقيقت پہ ہے شاہد

Aadam Ka Zameer Iski HaqeeqatYe Hay Shahid

آدم کا ضمير اس کي حقيقت پہ ہے شاہد مشکل نہيں اے سالک رہ ! علم فقيري فولاد کہاں رہتا ہے شمشير کے لائق پيدا ہو اگر اس کي طبيعت ميں حريري خود دار نہ ہو فقر تو ہے قہر الہي ہو صاحب غيرت تو ہے تمہيد اميري افرنگ ز …

Read More »

بے جرات رندانہ ہر عشق ہے روباہي

Bay Jurrat Rndanah Hr Ishaq Hy Robahii

بےجرات رندانہ ہر عشق ہے روباہي بازو ہے قوي جس کا ، وہ عشق يداللہي جو سختي منزل کو سامان سفر سمجھے اے وائے تن آساني ! ناپيد ہے وہ راہي وحشت نہ سمجھ اس کو اے مردک ميداني کہسار کي خلوت ہے تعليم خود آگاہي دنيا ہے رواياتي ، …

Read More »

مجھ کو تو يہ دنيا نظر آتي ہے دگرگوں

Mjhko Ko To Ye Dunya Nazer Ati Hay Dagrgoon

مجھ کو تو يہ دنيا نظر آتي ہے دگرگوں معلوم نہيں ديکھتي ہے تيري نظر کيا ہر سينے ميں اک صبح قيامت ہے نمودار افکار جوانوں کے ہوئے زير و زبر کيا کر سکتي ہے بے معرکہ جينے کي تلافي اے پير حرم تيري مناجات سحر کيا ممکن نہيں تخليق …

Read More »

لا ديني و لاطيني ، کس پيچ ميں الجھا تو

La Deeni Wla Teeni, Kis Bitch May Ulgha To

لا ديني و لاطيني ، کس پيچ ميں الجھا تو دارو ہے ضعيفوں کا ‘لاغالب الا ھو’ صياد معاني کو يورپ سے ہے نوميدي دلکش ہے فضا ، ليکن بے نافہ تمام آہو بے اشک سحر گاہي تقويم خودي مشکل يہ لالہ پيکاني خوشتر ہے کنار جو صياد ہے کافر …

Read More »

جس کے پرتو سے منور رہي تيري شب دوش

Jis Kay Per To say Munawwar Rahi Tere Shab e Doosh

جس کے پرتو سے منور رہي تيري شب دوش پھر بھي ہو سکتا ہے روشن وہ چراغ خاموش مرد بے حوصلہ کرتا ہے زمانے کا گلہ بندئہ حر کے ليے نشتر تقدير ہے نوش نہيں ہنگامہ پيکار کے لائق وہ جواں جو ہوا نالہ مرغان سحر سے مدہوش مجھ کو …

Read More »

وہي جواں ہے قبيلے کي آنکھ کا تارا

Wohi Jawan Hay Qabeely Ki Aankh Ka Tara

وہي جواں ہے قبيلے کي آنکھ کا تارا شباب جس کا ہے بے داغ ، ضرب ہے کاري اگر ہو جنگ تو شيران غاب سے بڑھ کر اگر ہو صلح تو رعنا غزال تاتاري عجب نہيں ہے اگر اس کا سوز ہے ہمہ سوز کہ نيستاں کے ليے بس ہے …

Read More »

عشق طينت ميں فرومايہ نہيں مثل ہوس

Ishaq Teenat May Fromayya Nahi Misal Hawas

عشق طينت ميں فرومايہ نہيں مثل ہوس پر شہباز سے ممکن نہيں پرواز مگس يوں بھي دستور گلستاں کو بدل سکتے ہيں کہ نشيمن ہو عنادل پہ گراں مثل قفس سفر آمادہ نہيں منتظر بانگ رحيل ہے کہاں قافلہ موج کو پروائے جرس گرچہ مکتب کا جواں زندہ نظر آتا …

Read More »

زاغ کہتا ہے نہايت بدنما ہيں تيرے پر

Zaag Khta Hy Nihayat Bud Numa Hain Tery Per

زاغ کہتا ہے نہايت بدنما ہيں تيرے پر شپرک کہتي ہے تجھ کو کور چشم و بے ہنر ليکن اے شہباز! يہ مرغان صحرا کے اچھوت ہيں فضائے نيلگوں کے پيچ و خم سے بے خبر ان کو کيا معلوم اس طائر کے احوال و مقام روح ہے جس کي …

Read More »

رومي بدلے ، شامي بدلے، بدلا ہندستان

Roomi Bdly, Shami Bdly, Bdla Hindustan

رومي بدلے ، شامي بدلے، بدلا ہندستان تو بھي اے فرزند کہستاں! اپني خودي پہچان اپني خودي پہچان او غافل افغان موسم اچھا ، پاني وافر ، مٹي بھي زرخيز جس نے اپنا کھيت نہ سينچا ، وہ کيسا دہقان اپني خودي پہچان او غافل افغان اونچي جس کي لہر …

Read More »

جو عالم ايجاد ميں ہے صاحب ايجاد

Jo Aalim e Ijaad May Hay Sahib e Ijaad

جو عالم ايجاد ميں ہے صاحب ايجاد ہر دور ميں کرتا ہے طواف اس کا زمانہ تقليد سے ناکارہ نہ کر اپني خودي کو کر اس کي حفاظت کہ يہ گوہر ہے يگانہ اس قوم کو تجديد کا پيغام مبارک ہے جس کے تصور ميں فقط بزم شبانہ ليکن مجھے …

Read More »

يہ مدرسہ يہ کھيل يہ غوغائے روارو

Ye Madrassa Ye Khail Ye Googaa e Rwaroo

يہ مدرسہ يہ کھيل يہ غوغائے روارو اس عيش فراواں ميں ہے ہر لحظہ غم نو وہ علم نہيں ، زہر ہے احرار کے حق ميں جس علم کا حاصل ہے جہاں ميں دو کف جو ناداں ! ادب و فلسفہ کچھ چيز نہيں ہے اسباب ہنر کے ليے لازم …

Read More »

کيا چرخ کج رو ، کيا مہر ، کيا ماہ

Kia Charkh Kj Row, Kia Mehar, Kia Mah

کيا چرخ کج رو ، کيا مہر ، کيا ماہ سب راہرو ہيں واماندہ راہ کڑکا سکندر بجلي کي مانند تجھ کو خبر ہے اے مرگ ناگاہ نادر نے لوٹي دلي کي دولت اک ضرب شمشير ، افسانہ کوتاہ افغان باقي ، کہسار باقي الحکم للہ ! الملک للہ حاجت …

Read More »

تري دعا سے قضا تو بدل نہيں سکتي

Tere Doa Say Qaza To Badal Nhi Sakti

تري دعا سے قضا تو بدل نہيں سکتي مگر ہے اس سے يہ ممکن کہ تو بدل جائے تري خودي ميں اگر انقلاب ہو پيدا عجب نہيں ہے کہ يہ چار سو بدل جائے وہي شراب ، وہي ہاے و ہو رہے باقي طريق ساقي و رسم کدو بدل جائے …

Read More »

حقيقت ازلي ہے رقابت اقوام

Haqeeqat Azlii Hy Rqaabat e Aqwaam

حقيقت ازلي ہے رقابت اقوام نگاہ پير فلک ميں نہ ميں عزيز ، نہ تو خودي ميں ڈوب ، زمانے سے نا اميد نہ ہو کہ اس کا زخم ہے درپردہ اہتمام رفو رہے گا تو ہي جہاں ميں يگانہ و يکتا اتر گيا جو ترے دل ميں ‘لاشريک لہ

Read More »

ميرے کہستاں! تجھے چھوڑ کے جاؤں کہاں

MeryKuhistaan! Tjhy Choor K Jaun Kahan

ميرے کہستاں! تجھے چھوڑ کے جاؤں کہاں تيري چٹانوں ميں ہے ميرے اب و جد کي خاک روز ازل سے ہے تو منزل شاہين و چرغ لالہ و گل سے تہي ، نغمہ بلبل سے پاک تيرے خم و پيچ ميں ميري بہشت بريں خاک تري عنبريں ، آب ترا …

Read More »

غلاموں کي نماز

Kha Mujahid Turkey Nay Mjh Say Bad Namaz

ترکي وفد ہلال احمر لاہور ميں کہا مجاہد ترکي نے مجھ سے بعد نماز طويل سجدہ ہيں کيوں اس قدر تمھارے امام وہ سادہ مرد مجاہد ، وہ مومن آزاد خبر نہ تھي اسے کيا چيز ہے نماز غلام ہزار کام ہيں مردان حر کو دنيا ميں انھي کے ذوق …

Read More »

ايک بحری قزاق اور سکندر

Sila Tera tere Zangeer Ya Shamsheer Hay Mere

سکندر صلہ تيرا تري زنجير يا شمشير ہے ميري کہ تيري رہزني سے تنگ ہے دريا کي پہنائي قزاق سکندر ! حيف ، تو اس کو جواں مردي سمجھتا ہے گوارا اس طرح کرتے ہيں ہم چشموں کي رسوائي؟ ترا پيشہ ہے سفاکي ، مرا پيشہ ہے سفاکي کہ ہم …

Read More »

نصيحت

Ik Lard e Farengi Nay Kha Apny Pisr Say

اک لرد فرنگي نے کہا اپنے پسر سے منظر وہ طلب کر کہ تري آنکھ نہ ہو سير بيچارے کے حق ميں ہے يہي سب سے بڑا ظلم برے پہ اگر فاش کريں قاعدہ شير سينے ميں رہے راز ملوکانہ تو بہتر کرتے نہيں محکوم کو تيغوں سے کبھي زير …

Read More »

دام تہذيب

Iqbal Ko Shak Iski Sharaft May Nhi Hy

اقبال کو شک اس کي شرافت ميں نہيں ہے ہر ملت مظلوم کا يورپ ہے خريدار يہ پير کليسا کي کرامت ہے کہ اس نے بجلي کے چراغوں سے منور کيے افکار جلتا ہے مگر شام و فلسطيں پہ مرا دل تدبير سے کھلتا نہيں يہ عقدہ دشوار ترکان ‘جفا …

Read More »

انتداب

Kahan Frishta Tehzeeb Ki Zarort Hay

کہاں فرشتہ تہذيب کي ضرورت ہے نہيں زمانہ حاضر کو اس ميں دشواري جہاں قمار نہيں ، زن تنک لباس نہيں جہاں حرام بتاتے ہيں شغل مے خواري بدن ميں گرچہ ہے اک روح ناشکيب و عميق طريقہ اب و جد سے نہيں ہے بيزاري جسور و زيرک و پردم …

Read More »

گلہ

Maloom Ksy Hind Ki Taqdeer Keh Ab Tak

معلوم کسے ہند کي تقدير کہ اب تک بيچارہ کسي تاج کا تابندہ نگيں ہے دہقاں ہے کسي قبر کا اگلا ہوا مردہ بوسيدہ کفن جس کا ابھي زير زميں ہے جاں بھي گرو غير ، بدن بھي گرو غير افسوس کہ باقي نہ مکاں ہے نہ مکيں ہے يورپ …

Read More »

مسولينی

Kia Zamany Say Nirala Hy Msooleeni Ka Jurm

اپنے مشرقي اور مغربي حريفوں سے کيا زمانے سے نرالا ہے مسوليني کا جرم بے محل بگڑا ہے معصومان يورپ کا مزاج ميں پھٹکتا ہوں تو چھلني کو برا لگتا ہے کيوں ہيں سبھي تہذيب کے اوزار ! تو چھلني ، ميں چھاج ميرے سودائے ملوکيت کو ٹھکراتے ہو تم …

Read More »

جمعيت اقوام مشرق

Paani Bhe Musakhhar Hay, Hawa Bhe Hy Musakhhar

پاني بھي مسخر ہے ، ہوا بھي ہے مسخر کيا ہو جو نگاہ فلک پير بدل جائے ديکھا ہے ملوکيت افرنگ نے جو خواب ممکن ہے کہ اس خواب کي تعبير بدل جائے طہران ہو گر عالم مشرق کا جينوا شايد کرہ ارض کي تقدير بدل جائے —————- بھوپال(شيش محل) …

Read More »

ابليس کا فرمان اپنے سياسي فرزندوں کے نام

Laa Ker Brahmnun Ko Siyasat k Beej May

لا کر برہمنوں کو سياست کے پيچ ميں زناريوں کو دير کہن سے نکال دو وہ فاقہ کش کہ موت سے ڈرتا نہيں ذرا روح محمد اس کے بدن سے نکال دو فکر عرب کو دے کے فرنگي تخيلات اسلام کو حجاز و يمن سے نکال دو افغانيوں کي غيرت …

Read More »