Home / علامہ اقبال شاعری / آدم کا ضمير اس کي حقيقت پہ ہے شاہد
Aadam Ka Zameer Iski HaqeeqatYe Hay Shahid

آدم کا ضمير اس کي حقيقت پہ ہے شاہد

آدم کا ضمير اس کي حقيقت پہ ہے شاہد
مشکل نہيں اے سالک رہ ! علم فقيري
فولاد کہاں رہتا ہے شمشير کے لائق
پيدا ہو اگر اس کي طبيعت ميں حريري
خود دار نہ ہو فقر تو ہے قہر الہي
ہو صاحب غيرت تو ہے تمہيد اميري

افرنگ ز خود بے خبرت کرد وگرنہ
اے بندئہ مومن ! تو بشيري ، تو نذيري

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے