Home / علامہ اقبال شاعری / با نگ درا / بانگ درا (حصہ دوم)

بانگ درا (حصہ دوم)

بانگ درا (حصہ دوم) Archives – Urdu Poetry Library

زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہيں

Zindagi Insan Ki Ek Dam Ke Sawa Kuch Bhi Nahin

زندگی انساں کی  اک دم کے سوا کچھ بھی نہيں دم ہوا کی موج ہے ،  رَم کے سِوا  کچھ بھی نہيں گل تَبَسُّم کہہ رہا  تھا  زندگانی  کو  مگر شمع بولی ،  گِریہء غم کے سِوا  کچھ بھی نہيں رازِہستی راز ہے جب تک کوئی محرم نہ ہو کھل …

Read More »

الہي عقل خجستہ پے کو ذرا سي ديوانگي سکھا دے

Elahi Aqal-e-Khujasta Pe Ko Zara Si Diwangi Sikha De

الہي عقل خجستہ پے کو ذرا سي ديوانگي سکھا دے اسے ہے سودائے بخيہ کاري ، مجھے سر پيرہن نہيں ہے ملا محبت کا سوز مجھ کو تو بولے صبح ازل فرشتے مثال شمع مزار ہے تو ، تري کوئي انجمن نہيں ہے يہاں کہاں ہم نفس ميسر ، يہ ديس نا آشنا ہے اے …

Read More »

زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا

Zamane Dekhe Ga Jab Mere Dil Se Mehshar Uthe Ga Gutugoo Ka

زمانہ ديکھے گا جب مرے دل سے محشر اٹھے گا گفتگو کا مري خموشي نہيں ہے ، گويا مزار ہے حرف آرزو کا جو موج دريا لگي يہ کہنے ، سفر سے قائم ہے شان ميري گہر يہ بولا صدف نشيني ہے مجھ کو سامان آبرو کا نہ ہو طبيعت ہي جن کي قابل ، …

Read More »

چمک تيري عياں بجلي ميں ، آتش ميں ، شرارے ميں

Chamak Teri Ayan Bijli Mein, Atish Mein, Sharare Mein

چمک تيري عياں بجلي ميں ، آتش ميں ، شرارے ميں جھلک تيري ہويدا چاند ميں ،سورج ميں ، تارے ميں بلندي آسمانوں ميں ، زمينوں ميں تري پستي رواني بحر ميں ، افتادگي تيري کنارے ميں شريعت کيوں گريباں گير ہو ذوق تکلم کي چھپا جاتا ہوں اپنے دل کا مطلب استعارے ميں جو ہے بيدار …

Read More »

يوں تو اے بزم جہاں! دلکش تھے ہنگامے ترے

Yun To Ae Bazm-e-Jahan! Dilkash The Hangame Tere

يوں تو اے بزم جہاں! دلکش تھے ہنگامے ترے اک ذرا افسردگي تيرے تماشائوں ميں تھي پا گئي آسودگي کوئے محبت ميں وہ خاک مدتوں آوارہ جو حکمت کے صحرائوں ميں تھي کس قدر اے مے! تجھے رسم حجاب آئي پسند پردہ انگور سے نکلي تو مينائوں ميں تھي حسن کي تاثير پر غالب نہ آ سکتا …

Read More »

مثال پرتو مے ، طوف جام کرتے ہيں

Misal-e-Partou Mai Tof-e-Jaam Karte Hain

مثال پرتو مے ، طوف جام کرتے ہيں يہي نماز ادا صبح و شام کرتے ہيں خصوصيت نہيں کچھ اس ميں اے کليم تري شجر حجر بھي خدا سے کلام کرتے ہيں نيا جہاں کوئي اے شمع ڈھونڈيے کہ يہاں ستم کش تپش ناتمام کرتے ہيں بھلي ہے ہم نفسو اس چمن ميں خاموشي کہ خوشنوائوں کو پابند …

Read More »

مارچ 1907

Zamana Aya Hay Bay Hijabi Ka, Aam Deedar Yaar Ho Ga

مارچ 1907ء زمانہ آيا ہے بے حجابي کا ، عام ديدار يار ہو گا سکوت تھا پردہ دار جس کا ، وہ راز اب آشکار ہوگا گزر گيا اب وہ دور ساقي کہ چھپ کے پيتے تھے پينے والے بنے گا سارا جہان مے خانہ ، ہر کوئي بادہ خوار ہو گا کبھي جو آوارہ …

Read More »

صقليہ

( جزيرہ سسلی) رو لے اب دل کھول کر اے ديدۂ خوننابہ بار وہ نظر آتا ہے تہذيب حجازی کا مزار تھا يہاں ہنگامہ ان صحرا نشينوں کا کبھی بحر بازی گاہ تھا جن کے سفينوں کا کبھی زلزلے جن سے شہنشاہوں کے درباروں ميں تھے بجليوں کے آشيانے جن …

Read More »

عبد القادر کے نام

اٹھ کہ ظلمت ہوئی پيدا افق خاور پر بزم ميں شعلہ نوائی سے اجالا کر ديں ايک فرياد ہے مانند سپند اپنی بساط اسی ہنگامے سے محفل تہ و بالا کر ديں اہل محفل کو دکھا ديں اثر صيقل عشق سنگ امروز کو آئينہ فردا کر ديں جلوہ يوسف گم …

Read More »

فراق

تلاش گوشۂ عزلت ميں پھر رہا ہوں ميں يہاں پہاڑ کے دامن ميں آ چھپا ہوں ميں شکستہ گيت ميں چشموں کے دلبری ہے کمال دعائے طفلک گفتار آزما کی مثال ہے تخت لعل شفق پر جلوس اختر شام بہشت ديدۂ بينا ہے حسن منظر شام سکوت شام جدائی ہوا …

Read More »

پيام عشق

سن اے طلب گار درد پہلو! ميں ناز ہوں ، تو نياز ہو جا ميں غزنوی سومنات دل کا ، تو سراپا اياز ہو جا نہيں ہے وابستہ زير گردوں کمال شان سکندری سے تمام ساماں ہے تيرے سينے ميں ، تو بھی آئينہ ساز ہو جا غرض ہے پيکار …

Read More »

تنہائی

تنہائی شب ميں ہے حزيں کيا انجم نہيں تيرے ہم نشيں کيا! يہ رفعت آسمان خاموش خوابيدہ زميں ، جہان خاموش يہ چاند ، يہ دشت و در ، يہ کہسار فطرت ہے تمام نسترن زار موتی خوش رنگ ، پيارے پيارے يعنی ترے آنسوئوں کے تارے کس شے کی …

Read More »

ايک شام

ايک شام ( دريائے نيکر ‘ہائيڈل برگ ‘ کے کنارے پر ) خاموش ہے چاندنی قَمَر کی شاخيں ہيں خَموش ہر شجر کی وادی کے نوا فَروش خاموش کُہسار کے سبز پوش  خاموش فِطرَت بے ہوش ہو گئی ہے آغوش ميں شب کے سو گئی ہے کچھ ايسا سَکوت کا …

Read More »

جلوۂ حسن

جلوہ حسن کہ ہے جس سے تمنا بے تاب پالتا ہے جسے آغوش تخيل ميں شباب ابدی بنتا ہے يہ عالم فانی جس سے ايک افسانہ رنگيں ہے جوانی جس سے جو سکھاتا ہے ہميں سر بہ گريباں ہونا منظر عالم حاضر سے گريزاں ہونا دور ہو جاتی ہے ادراک …

Read More »

انسان

قدرت کا عجيب يہ ستم ہے! انسان کو راز جو بنايا راز اس کی نگاہ سے چھپايا بے تاب ہے ذوق آگہی کا کھلتا نہيں بھيد زندگی کا حيرت آغاز و انتہا ہے آئينے کے گھر ميں اور کيا ہے ہے گرم خرام موج دريا دريا سوئے سجر جادہ پيما …

Read More »

عشر ت امروز

نہ مجھ سے کہہ کہ اجل ہے پيام عيش و سرور نہ کھينچ نقشہ کيفيت شراب طہور فراق حور ميں ہو غم سے ہمکنار نہ تو پری کو شيشہ الفاظ ميں اتار نہ تو مجھے فريفتہ ساقی جميل نہ کر بيان حور نہ کر ، ذکر سلسبيل نہ کر مقام …

Read More »

نوائے غم

زندگانی ہے مری مثل رباب خاموش جس کی ہر رنگ کے نغموں سے ہے لبريز آغوش بربط کون و مکاں جس کی خموشی پہ نثار جس کے ہر تار ميں ہيں سينکڑوں نغموں کے مزار محشرستان نوا کا ہے اميں جس کا سکوت اور منت کش ہنگامہ نہيں جس کا …

Read More »

کوشش ناتمام

فرقت آفتاب ميں کھاتی ہے پيچ و تاب صبح چشم شفق ہے خوں فشاں اختر شام کے ليے رہتی ہے قيس روز کو ليلی شام کی ہوس اختر صبح مضطرب تاب دوام کے ليے کہتا تھا قطب آسماں قافلہ نجوم سے ہمرہو ، ميں ترس گيا لطف خرام کے ليے …

Read More »

عاشق ہرجائی

(1) ہے عجب مجموعۂ اضداد اے اقبال تو رونق ہنگامۂ محفل بھی ہے، تنہا بھی ہے تيرے ہنگاموں سے اے ديوانہ رنگيں نوا! زينت گلشن بھی ہے ، آرائش صحرا بھی ہے ہم نشيں تاروں کا ہے تو رفعت پرواز سے اے زميں فرسا ، قدم تيرا فلک پيما بھی …

Read More »

سليمی

جس کی نمود ديکھی چشم ستارہ بيں نے خورشيد ميں ، قمر ميں ، تاروں کی انجمن ميں صوفی نے جس کو دل کے ظلمت کدے ميں پايا شاعر نے جس کو ديکھا قدرت کے بانکپن ميں جس کی چمک ہے پيدا ، جس کی مہک ہويدا شبنم کے موتيوں …

Read More »

و صال

جستجو جس گل کی تڑپاتی تھی اے بلبل مجھے خوبی قسمت سے آخر مل گيا وہ گل مجھے خود تڑپتا تھا ، چمن والوں کو تڑپاتا تھا ميں تجھ کو جب رنگيں نوا پاتا تھا ، شرماتا تھا ميں ميرے پہلو ميں دل مضطر نہ تھا ، سيماب تھا ارتکاب …

Read More »

کلی

جب دکھاتی ہے سحر عارض رنگيں اپنا کھول ديتی ہے کلی سينۂ زريں اپنا جلوہ آشام ہے صبح کے مے خانے ميں زندگی اس کی ہے خورشيد کے پيمانے ميں سامنے مہر کے دل چير کے رکھ ديتی ہے کس قدر سينہ شگافی کے مزے ليتی ہے مرے خورشيد! کبھی …

Read More »

۔۔۔۔۔۔۔ کی گود ميں بلی ديکھ کر

تجھ کو دزديدہ نگاہی يہ سکھا دی کس نے رمز آغاز محبت کی بتا دی کس نے ہر ادا سے تيری پيدا ہے محبت کيسی نيلی آنکھوں سے ٹپکتی ہے ذکاوت کيسی ديکھتی ہے کبھی ان کو، کبھی شرماتی ہے کبھی اٹھتی ہے ، کبھی ليٹ کے سو جاتی ہے …

Read More »

حسن و عشق

جس طرح ڈوبتی ہے کشتی سيمين قمر نور خورشيد کے طوفان ميں ہنگام سحر جسے ہو جاتا ہے گم نور کا لے کر آنچل چاندنی رات ميں مہتاب کا ہمرنگ کنول جلوہ طور ميں جيسے يد بيضائے کليم موجہ نکہت گلزار ميں غنچے کی شميم ہے ترے سيل محبت ميں …

Read More »

اختر صبح

ستارہ صبح کا روتا تھا اور يہ کہتا تھا ملی نگاہ مگر فرصت نظر نہ ملی ہوئی ہے زندہ دم آفتاب سے ہر شے اماں مجھی کو تہِ دامن سحر نہ ملی بساط کيا ہے بھلا صبح کے ستارے کی نفس حباب کا ، تابندگی شرارے کی کہا يہ ميں …

Read More »

پيا م

عشق نے کردیا تجھے ذوقِ تپش سے آشنا بزم کو مثلِ شمعِ بزم حاصلِ سوز و ساز دے شانِ کرم پہ ہے مدار عشقِ گرہ کشائے کا دیر و حرم کی قید کیا ! جس کو وہ بے نیاز دے صورتِ شمع نور کی ملتی نہیں قبا اسے جس کو …

Read More »

حقيقتِ حسن

خدا سے حسن نے اک روز يہ سوال کيا جہاں ميں کيوں نہ مجھے تو نے لازوال کيا ملا جواب کہ تصوير خانہ ہے دنيا شب دراز عدم کا فسانہ ہے دنيا ہوئی ہے رنگ تغير سے جب نمود اس کی وہی حسيں ہے حقيقت زوال ہے جس کی کہيں …

Read More »

محبت

عروس شب کی زلفيں تھيں ابھی نا آشنا خم سے ستارے آسماں کے بے خبر تھے لذت رم سے قمر اپنے لباس نو ميں بيگانہ سا لگتا تھا نہ تھا واقف ابھی گردش کے آئين مسلم سے ابھی امکاں کے ظلمت خانے سے ابھری ہی تھی دنيا مذاق زندگی پوشيدہ …

Read More »