سليمی

جس کی نمود ديکھی چشم ستارہ بيں نے
خورشيد ميں ، قمر ميں ، تاروں کی انجمن ميں
صوفی نے جس کو دل کے ظلمت کدے ميں پايا
شاعر نے جس کو ديکھا قدرت کے بانکپن ميں
جس کی چمک ہے پيدا ، جس کی مہک ہويدا
شبنم کے موتيوں ميں ، پھولوں کے پيرہن ميں
صحرا کو ہے بسايا جس نے سکوت بن کر
ہنگامہ جس کے دم سے کاشانہ چمن ميں
ہر شے ميں ہے نماياں يوں تو جمال اس کا
آنکھوں ميں ہے سليمی تيری کمال اس کا

 

————

 

Transliteration

 

Sulaima

 

Jis Ki Namood Dekhi Chasm-e-Sitara Been Ne
Khursheed Mein, Qamar Mein, Taron Ki Anjuman Mein

 

Sufi Ne Jis Ko Dil Ke Zulmat Kade Mein Paya
Shayar Ne Jis Ko Dekha Qudrat Ke Bankpan Mein

 

Jis Ki Chamak Hai Paida, Jis Ki Mehak Haweda
Shabnam Ke Motiyon Mein, Phoolon Ke Pairhan Mein

 

Sehra Ko Hai Basaya Jis Ne Sukoot Ban Kar
Hangama Jis Ke Dam Se Kashana-e-Chaman Mein

 

Har Shay Mein Hai Namayan Yun To Jamal Uss Ka
Ankhon Mein Hai Sulema! Teri Kamal Uss Ka

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے