عشر ت امروز

نہ مجھ سے کہہ کہ اجل ہے پيام عيش و سرور
نہ کھينچ نقشہ کيفيت شراب طہور
فراق حور ميں ہو غم سے ہمکنار نہ تو
پری کو شيشہ الفاظ ميں اتار نہ تو
مجھے فريفتہ ساقی جميل نہ کر
بيان حور نہ کر ، ذکر سلسبيل نہ کر
مقام امن ہے جنت ، مجھے کلام نہيں
شباب کے ليے موزوں ترا پيام نہيں
شباب ، آہ! کہاں تک اميدوار رہے
وہ عيش ، عيش نہيں ، جس کا انتظار رہے
وہ حسن کيا جو محتاج چشم بينا ہو
نمود کے ليے منت پذير فردا ہو
عجيب چيز ہے احساس زندگانی کا
عقيدہ ‘عشرت امروز’ ہے جوانی کا

 

————–

 

Transliteration

 

Ishrat-e-Amroz

Na Mujh Se Keh Ke Ajal Hai Payam-e-Aysh-o-Suroor
Na Khainch Naqsha-e-Kafiat-e-Sharab-e-Tahoor

 

Firaaq-e-Hoor Mein Ho Gham Se Humkinar Na Tu
Pari Ko Shisha-e-Alfaz Mein Utar Na Tu

 

Mujhe Fareefta-e-Saqi-e-Jameel Na Kar
Byan-e-Hoor Na Kar, Zikr-e-Salsbeel Na Kar

 

Maqam-e-Aman Hai Jannat, Mujhe Kalam Nahin
Shabab Ke Liye Mouzun Tera Payam Nahin

 

Shabab, Aah ! Kahan Tak Umeedwar Rahe
Woh Aysh, Aysh Nahin, Jis Ka Intizar Rahe

 

Woh Husn Kya Ke Jo Mouhtaj-e-Chashm-e-Beena Ho
Namood Ke Liye Minnat Pazeer-e-Farda Ho

 

Ajeeb Cheez Hai Ehsas Zindagi Ka
Aqeedah ‘Ishrat-e-Amroz’ Hai Jawani Ka

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے