سوامی رام تير تھ

ہم بغل دريا سے ہے اے قطرۂ بے تاب  تو
پہلے گوہر تھا ، بنا اب گوہر ناياب تو
آہ کھولا کس ادا سے تو نے راز رنگ و بو
ميں ابھی تک ہوں اسير امتياز رنگ و بو
مٹ کے غوغا زندگی کا شورش محشر بنا
يہ شرارہ بجھ کے آتش خانہ آزر بنا
نفی ہستی اک کرشمہ ہے دل آگاہ کا
‘لا’ کے دريا ميں نہاں موتی ہے ‘الااللہ’ کا
چشم نابينا سے مخفی معنی انجام ہے
تھم گئی جس دم تڑپ ، سيماب سيم خام ہے
توڑ ديتا ہے بت ہستی کو ابراہيم عشق
ہوش کا دارو ہے گويا مستی تسنيم عشق

 

————–

 

Transliteration

 

Swami Ram Tirath

Hum Baghal Darya Se Hai Ae Qatra-e-Betaab Tu
Pehle Gohar Tha, Bana Ab Kohar-e-Nayab Tu

Aah! Khola Kis Ada Se Tu Ne Raaz-e-Rang-o-Bu
Main Abhi Tak Hun Aseer-e-Imtiaz-e-Rang-o-Bu

 

Mit Ke Ghogha Zindagi Ka Shorish-e-Mehshar Bana
Ye Sharah Bujh Ke Atish Khana-e-Azar Bana

Nafi-e-Hasti Ek Karishma Hai Dil-e-Agah Ka
‘LA’ Ke Darya Mein Nihan Moti Hai ‘ILLALLAH’ Ka

Chashm-e-Nabeena Se Makhfi Maani-e-Anjaam Hai
Tham Gyi Jis Dam Tarap, Seemab Seem-e-Kham Hai

Torh Deta Hai But-e-Hasti Ko Ibraheem-e-Ishq
Hosh Ka Daru Hai Goya Masti-e-Tasneem-e-Ishq

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے