Zindagi Insan Ki Ek Dam Ke Sawa Kuch Bhi Nahin

زندگی انساں کی اک دم کے سوا کچھ بھی نہيں

زندگی انساں کی  اک دم کے سوا کچھ بھی نہيں
دم ہوا کی موج ہے ،  رَم کے سِوا  کچھ بھی نہيں
گل تَبَسُّم کہہ رہا  تھا  زندگانی  کو  مگر
شمع بولی ،  گِریہء غم کے سِوا  کچھ بھی نہيں
رازِہستی راز ہے جب تک کوئی محرم نہ ہو
کھل گيا  جس دم تو محرم کے سوا  کچھ بھی نہيں
زائرانِ کعبہ سے اقبال  يہ  پوچھے کوئی
کياحرم کا تحفہ زمزم کے سوا  کچھ بھی نہيں


دم: سانس _  رَم: بھاگنا، بھاگ اٹھنا _  تَبَسُّم: مسکرانے کی حالت _   گِریہء غم: دکھ درد کا رونا _ رازِہستی: زندگی کا بھید، زندگی کیا ہے ؟  محرم: واقف حال _ کھل گيا: ظاہر ہو گیا _  دم: پل، وقت، گھڑی _   زائرانِ: زائر کی جمع، زیارت کرنے والے _ حرم: کعبہ _  زمزم: آبِ زم زم


Transliteration

 

Zindagi Insan Ki Ek Dam Ke Sawa Kuch Bhi Nahin
Dam Hawa Ki Mouj Hai, Ram Ke Siwa Kuch Bhi Nahin

Gul Tabassum Keh Raha Tha Zindagaani Ko Magar
Shama Boli, Girya-e-Gham Ke Siwa Kuch Bhi Nahin

Raaz-e-Hasti Raaz Hai Jab Tak Koi Mehram Na Ho
Khul Gya Jis Dam To Mehram Ke Siwa Kuch Bhi Nahin

Zaeeran-e-Kaaba Se Iqbal Ye Puche Koi

       Kya Haram Ka Tohfa Zamzam Ke Siwa Kuch Bhi Nahin

Kya Haram Ka Tohfa Zamzam Ke Siwa Kuch Bhi Nahin

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے