کوشش ناتمام

فرقت آفتاب ميں کھاتی ہے پيچ و تاب صبح
چشم شفق ہے خوں فشاں اختر شام کے ليے
رہتی ہے قيس روز کو ليلی شام کی ہوس
اختر صبح مضطرب تاب دوام کے ليے
کہتا تھا قطب آسماں قافلہ نجوم سے
ہمرہو ، ميں ترس گيا لطف خرام کے ليے
سوتوں کو نديوں کا شوق ، بحر کا نديوں کو عشق
موجۂ بحر کو تپش ماہ تمام کے ليے
حسن ازل کہ پردۂ لالہ و گل ميں ہے نہاں
کہتے ہيں بے قرار ہے جلوۂ عام کے ليے
راز حيات پو چھ لے خضر خجستہ گام سے
زندہ ہر ايک چيز ہے کوشش ناتمام سے

 

————–

 

Transliteration

 

Kosish-e-Natamam

Furqat-e-Aftab Mein Khati Hai Paich-o-Taab Subha
Chasm-e-Shafaq Hai Khoon Fashan Akhtar-e-Shaam Ke Liye

Rehti Hai Qais-e-Roz Ko Laila-e-Sham Ki Hawas
Akhtar-e-Subah Muztarib Taab-e-Dawam Ke Liye

Kehta Tha Qutb-e-Asman Qafla-e-Najoom Se
Humraho, Main Taras Gya Lutf-e-Kharaam Ke Liye

Soton Ko Naddiyon Ka Shauq, Behar Ka Naddiyon Ko Ishq
Moja-e-Behar Ko Tapish Mah-e-Tamam Ke Liye

Husn-e-Azal Ke Parda-e-Lala-o-Gul Mein Hai Nihan
Kehte Hain Be-Qarar Hai Jalwa-e-Aam Ke Liye

 

Raaz-e-Hayat Puch Le Khizr-e-Khajasta Gaam Se
Zinda Har Aik Cheez Hai Kosish-e-Natamam Se

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے