Home / علامہ اقبال شاعری / ضرب کلیم / سیاسیات مشرق و مغرب

سیاسیات مشرق و مغرب

غلاموں کي نماز

Kha Mujahid Turkey Nay Mjh Say Bad Namaz

ترکي وفد ہلال احمر لاہور ميں کہا مجاہد ترکي نے مجھ سے بعد نماز طويل سجدہ ہيں کيوں اس قدر تمھارے امام وہ سادہ مرد مجاہد ، وہ مومن آزاد خبر نہ تھي اسے کيا چيز ہے نماز غلام ہزار کام ہيں مردان حر کو دنيا ميں انھي کے ذوق …

Read More »

ايک بحری قزاق اور سکندر

Sila Tera tere Zangeer Ya Shamsheer Hay Mere

سکندر صلہ تيرا تري زنجير يا شمشير ہے ميري کہ تيري رہزني سے تنگ ہے دريا کي پہنائي قزاق سکندر ! حيف ، تو اس کو جواں مردي سمجھتا ہے گوارا اس طرح کرتے ہيں ہم چشموں کي رسوائي؟ ترا پيشہ ہے سفاکي ، مرا پيشہ ہے سفاکي کہ ہم …

Read More »

نصيحت

Ik Lard e Farengi Nay Kha Apny Pisr Say

اک لرد فرنگي نے کہا اپنے پسر سے منظر وہ طلب کر کہ تري آنکھ نہ ہو سير بيچارے کے حق ميں ہے يہي سب سے بڑا ظلم برے پہ اگر فاش کريں قاعدہ شير سينے ميں رہے راز ملوکانہ تو بہتر کرتے نہيں محکوم کو تيغوں سے کبھي زير …

Read More »

دام تہذيب

Iqbal Ko Shak Iski Sharaft May Nhi Hy

اقبال کو شک اس کي شرافت ميں نہيں ہے ہر ملت مظلوم کا يورپ ہے خريدار يہ پير کليسا کي کرامت ہے کہ اس نے بجلي کے چراغوں سے منور کيے افکار جلتا ہے مگر شام و فلسطيں پہ مرا دل تدبير سے کھلتا نہيں يہ عقدہ دشوار ترکان ‘جفا …

Read More »

انتداب

Kahan Frishta Tehzeeb Ki Zarort Hay

کہاں فرشتہ تہذيب کي ضرورت ہے نہيں زمانہ حاضر کو اس ميں دشواري جہاں قمار نہيں ، زن تنک لباس نہيں جہاں حرام بتاتے ہيں شغل مے خواري بدن ميں گرچہ ہے اک روح ناشکيب و عميق طريقہ اب و جد سے نہيں ہے بيزاري جسور و زيرک و پردم …

Read More »

گلہ

Maloom Ksy Hind Ki Taqdeer Keh Ab Tak

معلوم کسے ہند کي تقدير کہ اب تک بيچارہ کسي تاج کا تابندہ نگيں ہے دہقاں ہے کسي قبر کا اگلا ہوا مردہ بوسيدہ کفن جس کا ابھي زير زميں ہے جاں بھي گرو غير ، بدن بھي گرو غير افسوس کہ باقي نہ مکاں ہے نہ مکيں ہے يورپ …

Read More »

مسولينی

Kia Zamany Say Nirala Hy Msooleeni Ka Jurm

اپنے مشرقي اور مغربي حريفوں سے کيا زمانے سے نرالا ہے مسوليني کا جرم بے محل بگڑا ہے معصومان يورپ کا مزاج ميں پھٹکتا ہوں تو چھلني کو برا لگتا ہے کيوں ہيں سبھي تہذيب کے اوزار ! تو چھلني ، ميں چھاج ميرے سودائے ملوکيت کو ٹھکراتے ہو تم …

Read More »

جمعيت اقوام مشرق

Paani Bhe Musakhhar Hay, Hawa Bhe Hy Musakhhar

پاني بھي مسخر ہے ، ہوا بھي ہے مسخر کيا ہو جو نگاہ فلک پير بدل جائے ديکھا ہے ملوکيت افرنگ نے جو خواب ممکن ہے کہ اس خواب کي تعبير بدل جائے طہران ہو گر عالم مشرق کا جينوا شايد کرہ ارض کي تقدير بدل جائے —————- بھوپال(شيش محل) …

Read More »

ابليس کا فرمان اپنے سياسي فرزندوں کے نام

Laa Ker Brahmnun Ko Siyasat k Beej May

لا کر برہمنوں کو سياست کے پيچ ميں زناريوں کو دير کہن سے نکال دو وہ فاقہ کش کہ موت سے ڈرتا نہيں ذرا روح محمد اس کے بدن سے نکال دو فکر عرب کو دے کے فرنگي تخيلات اسلام کو حجاز و يمن سے نکال دو افغانيوں کي غيرت …

Read More »

ابي سينيا – 1935 18 اگست

Europe Kay Kirgissun Ko Nahi Hay Abhi Khaber

يورپ کے کرگسوں کو نہيں ہے ابھي خبر ہے کتني زہر ناک ابي سينيا کي لاش ہونے کو ہے يہ مردہ ديرينہ قاش قاش تہذيب کا کمال شرافت کا ہے زوال غارت گري جہاں ميں ہے اقوام کي معاش ہر گرگ کو ہے برہ معصوم کي تلاش اے وائے آبروئے …

Read More »

اہل مصر سے

Khud Abu Alhool Ny Ye Nukta Sikhaya Mjh Ko

خود ابوالہول نے يہ نکتہ سکھايا مجھ کو وہ ابوالہول کہ ہے صاحب اسرار قديم دفعتہً جس سے بدل جاتي ہے تقدير امم ہے وہ قوت کہ حريف اس کي نہيں عقل حکيم ہر زمانے ميں دگر گوں ہے طبيعت اس کي کبھي شمشير محمد ہے ، کبھي چوب کليم

Read More »

خواجگی

Door e Hazir Hay Haqqeqt May Wohi Ahd Qadeem

دور حاضر ہے حقيقت ميں وہي عہد قديم اہل سجادہ ہيں يا اہل سياست ہيں امام اس ميں پيري کي کرامت ہے نہ ميري کا ہے زور سينکڑوں صديوں سے خوگر ہيں غلامي کے عوام خواجگي ميں کوئي مشکل نہيں رہتي باقي پختہ ہو جاتے ہيں جب خوئے غلامي ميں …

Read More »

مشرق

Mere Nawa Say Garybaan Laalah Chaak Hwa

مري نوا سے گريبان لالہ چاک ہوا نسيم صبح ، چمن کي تلاش ميں ہے ابھي نہ مصطفي نہ رضا شاہ ميں نمود اس کي کہ روح شرق بدن کي تلاش ميں ہے ابھي مري خودي بھي سزا کي ہے مستحق ليکن زمانہ دارو رسن کي تلاش ميں ہے ابھي

Read More »

مناصب

Howa Hay Bnda e Momin Fasooni Afreng

ہوا ہے بندئہ مومن فسوني افرنگ اسي سبب سے قلندر کي آنکھ ہے نم ناک ترے بلند مناصب کي خير ہو يارب کہ ان کے واسطے تو نے کيا خودي کو ہلاک مگر يہ بات چھپائے سے چھپ نہيں سکتي سمجھ گئي ہے اسے ہر طبيعت چالاک شريک حکم غلاموں …

Read More »

خوشامد

Main Kaar Jahan Say Nahi Aagah, Lekin

ميں کار جہاں سے نہيں آگاہ ، وليکن ارباب نظر سے نہيں پوشيدہ کوئي راز کر تو بھي حکومت کے وزيروں کي خوشامد دستور نيا ، اور نئے دور کا آغاز معلوم نہيں ، ہے يہ خوشامد کہ حقيقت کہہ دے کوئي الو کو اگر ‘رات کا شہباز

Read More »

کارل مارکس کی آواز

Ye Ilm Wa Hikmat Ki Muhra Bazi, Ye Bahs o Takraar Ki Numaaish

يہ علم و حکمت کي مہرہ بازي ، يہ بحث و تکرار کي نمائش نہيں ہے دنيا کو اب گوارا پرانے افکار کي نمائش تري کتابوں ميں اے حکيم معاش رکھا ہي کيا ہے آخر خطوط خم دار کي نمائش ، مريز و کج دار کي نمائش جہان مغرب کے …

Read More »

اشتراکيت

Qoumun Ki Rawish Say Mjhy Hota Hay Ye Maloom

اشتراکيت قوموں کي روش سے مجھے ہوتا ہے يہ معلوم بے سود نہيں روس کي يہ گرمي رفتار انديشہ ہوا شوخي افکار پہ مجبور فرسودہ طريقوں سے زمانہ ہوا بيزار انساں کي ہوس نے جنھيں رکھا تھا چھپا کر کھلتے نظر آتے ہيں بتدريج وہ اسرار قرآن ميں ہو غوطہ …

Read More »