Mazaq Didah Say Na Ashna Nazar Hay Mere

ميں اورتو

مذاق ديد سے ناآشنا نظر ہے مری
تری نگاہ ہے فطرت کی راز داں، پھر کيا
رہين شکوۂ ايام ہے زبان مری
تری مراد پہ ہے دور آسماں، پھر کيا
رکھا مجھے چمن آوارہ مثل موج نسيم
عطا فلک نے کيا تجھ کو آشياں، پھر کيا
فزوں ہے سود سے سرمايۂ حيات ترا
مرے نصيب ميں ہے کاوش زياں، پھر کيا
ہوا ميں تيرتے پھرتے ہيں تيرے طيارے
مرا جہاز ہے محروم بادباں، پھر کيا

قوی شديم چہ شد، ناتواں شديم چہ شد
چنيں شديم چہ شد يا چناں شديم چہ شد
بہيچ گونہ دريں گلستاں قرارے نيست
توگر بہار شدی، ما خزاں شديم، چہ شد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے