نہ آتے ، ہميں اس ميں تکرار کيا تھی

نہ آتے ، ہميں اس ميں تکرار کيا تھی
مگر وعدہ کرتے ہوئے عار کيا تھی
تمھارے پيامی نے سب راز کھولا
خطا اس ميں بندے کی سرکار کيا تھی
بھری بزم ميں اپنے عاشق کو تاڑا
تری آنکھ مستی ميں ہشيار کيا تھی
تامل تو تھا ان کو آنے ميں قاصد
مگر يہ بتا طرز انکار کيا تھی
کھنچے خود بخود جانب طور موسی
کشش تيری اے شوق ديدار کيا تھی
کہيں ذکر رہتا ہے اقبال تيرا
فسوں تھا کوئی ، تيری گفتار کيا تھی
—————
Transliteration
Na Ate, Humain Iss Mein Takrar Ka Thi
Magar Wada Karte Huwe Aar Kya Thi

Tumhare Payami Ne Sub Raaz Khola
Khata Iss Mein Bande Ki Sarkar Kya Thi

Bhari Bazm Mein Apne Ashiq Ko Tara
Teri Ankh Masti Mein Hushyar Kya Thi!

Y
Tammal To Tha Un Ko Ane Mein Qasid
Magar Ye Bata Tarz-e-Inkar Kya Thi

Khinche Khud-Ba-Khud Janib-e-Toor Musa (A.S.)
Kashish Teri Ae Shauq-e-Didar Kya Thi !

Kahin Zikr Rehta Hai Iqbal Tera
Fasoon Tha Koi, Teri Guftar Kya Thi

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے