Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / تو ابھی رہ گزر ميں ہے ، قيد مقام سے گزر
Tu Abhi Reh Guzr Mein Hai, Qaid-e-Maqam Se Guzr

تو ابھی رہ گزر ميں ہے ، قيد مقام سے گزر

لندن ميں    لکھے گئے

تو ابھی رہ گزر ميں ہے ، قيد مقام سے گزر

تو ابھی رہ گزر ميں ہے ، قيد مقام سے گزر
مصر و حجاز سے گزر ، پارس و شام سے گزر
جس کا عمل ہے بے غرض ، اس کی جزا کچھ اور ہے
حور و خيام سے گزر ، بادہ و جام سے گزر
گرچہ ہے دلکشا بہت حسن فرنگ کی بہار
طائرک بلند بال ، دانہ و دام سے گزر
کوہ شگاف تيری ضرب ، تجھ سے کشاد شرق و غرب
تيغ ہلال کی طرح عيش نيام سے گزر
تيرا امام بے حضور ، تيری نماز بے سرور
ايسی نماز سے گزر ، ايسے امام سے گزر

————————

(London Mein Likhe Gye)

Translation

Tu Abhi Reh Guzr Mein Hai, Qaid-e-Maqam Se Guzr
Misr-o-Hijaz Se Guzr, Paras-o-Shaam Se Guzr

Jis Ka Amal Hai Be-Gharz, Uss Ki Jaza Kuch Aur Hai
Hoor-o-Khiyaam Se Guzr, Badah-o-Jaam Se Guzr

Garcha Hai Dilkusha Bohat Husn-e-Farang Ki Bahar
Taeerik-e-Buland Baal, Dana-o-Daam Se Guzr

Koh Shigaaf Teri Zarb, Tujh Se Kushaad-e-Sharq-o-Gharb
Taigh-e-Hilal Ki Tarah Aesh-e-Niyam Se Guzr

Tera Imam Be Huzoor, Teri Namaz Be Suroor
Aesi Namaz Se Guzr, Aese Imam Se Guzr

——————————-

(Written in London)

You are yet region‐bound, Transcend the limits of space;
Transcend the narrow climes of the East and the West.

For selfless deeds of men rewards are less mundane;
Transcend the houris’ glances, the pure, celestial wine.

Ravishing in its power is beauty in the West;
You bird of paradise, resist this earthly trap.

With a mountain‐cleaving assault, bridging the East and West,
Despise all defences, and become a sheathless sword.

Your imam is unabsorbed, Your prayer is uninspired,
Forsake an imam like him, forsake a prayer like this

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے