Sateza Kar Raha Hay Azal Say Ta Amrooz

ارتقا

 

ستيزہ کار رہا ہے ازل سے تا امروز
چراغ مصطفوی سے شرار بولہبی
حيات شعلہ مزاج و غيور و شور انگيز
سرشت اس کی ہے مشکل کشی، جفا طلبی
سکوت شام سے تا نغمہ سحر گاہی
ہزار مرحلہ ہائے فعان نيم شبی
کشا کش زم و گرما، تپ و تراش و خراش
ز خاک تيرہ دروں تا بہ شيشہ حلبی
مقام بست و شکت و فشار و سوز و کشيد
ميان قطرۂ نيسان و آتش عنبی
اسی کشاکش پيہم سے زندہ ہيں اقوام
يہی ہے راز تب و تاب ملت عربی
”مغاں کہ دانۂ انگور آب می سازند
ستارہ می شکنند، آفتاب می سازند

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے