Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / نہ تخت و تاج ميں ، نے لشکر و سپاہ ميں ہے

نہ تخت و تاج ميں ، نے لشکر و سپاہ ميں ہے


نہ تخت و تاج ميں ، نے لشکر و سپاہ ميں ہے
جو بات مرد قلندر کی بارگاہ ميں ہے
صنم کدہ ہے جہاں اور مرد حق ہے خليل
يہ نکتہ وہ ہے کہ پوشيدہ لاالہ ميں ہے
وہی جہاں ہے ترا جس کو تو کرے پيدا
يہ سنگ و خشت نہيں ، جو تری نگاہ ميں ہے
مہ و ستارہ سے آگے مقام ہے جس کا
وہ مشت خاک ابھی آوارگان راہ ميں ہے
خبر ملی ہے خدايان بحر و بر سے مجھے
فرنگ رہ گزر سيل بے پناہ ميں ہے
تلاش اس کی فضاؤں ميں کر نصيب اپنا
جہان تازہ مری آہ صبح گاہ ميں ہے
مرے کدو کو غنيمت سمجھ کہ بادہ ناب
نہ مدرسے ميں ہے باقی نہ خانقاہ ميں ہے

———————-

Translation

Na Takht-o-Taaj Mein Ne Lashkar-o-Sipah Mein Hai
Jo Baat Mard-e-Qalandar Ki Bargah Mein Hai

Sanam Kadah Hai Jahan Aur Mard-e-Haq Hai Khalil
Ye Nukta Woh Hai Ke Poshida LA ILAHA Mein Hai

Woh Jahan Hai Tera Jis Ko Tu Kare Paida
Ye Sang-o-Khisht Nahin, Jo Teri Nigah Mein Hai

Mah-o-Sitara Se Agay Maqam Hai Jis Ka
Woh Musht-e-Khak Abhi  Awargan-e-Rah Mein Hai

Khabar Mili Hai Khudayan-e-Behar-o-Bar Se Mujhe
Farang Reh-Guzar-e-Seel-e-Be Panah Mein Hai

Talash Uss Ki Fazaon Mein Kar Naseeb Apna
Jahan-e-Taza Meri Aah-e-Subahgah Mein Hai

Mere Kidu Ko Ghanimat Samajh Ke Bada-e-Naab
Na Madrase Mein Hai, Baqi Na Khanqah Mein Hai

————————————–

A monarch’s pomp and mighty arms can never give such glee,
As can be felt in presence of a Qalandar bold and free.

The world is like an idol house, God’s Friend, a person free:
No doubt, this subtle point is hid In words, No god but He.

The world that you with effort make to you belongs alone:
The world of brick and stone you see, You cannot call your own.

The clay‐made man is still among the vagrants on the road,
Though man beyond the moon and stars can find his true abode.

This news I have received from those who rule the sea and land,
That Europe lies on course of flood ’Gainst which no one can stand.

A world there is quite fresh and new in sighs at morn I have:
Your portion seek within its tracts, Thus goal and aim achieve.

Count my gourd an immense gain, for pure and sparkling wine
No more the seats of learning store nor sells the Sacred Shrine.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے