مو ج دريا

مضطرب رکھتا ہے ميرا دل بے تاب مجھے
عين ہستی ہے تڑپ صورت سيماب مجھے
موج ہے نام مرا ، بحر ہے پاياب مجھے
ہو نہ زنجير کبھی حلقۂ گرداب مجھے

آب ميں مثل ہوا جاتا ہے توسن ميرا
خار ماہی سے نہ اٹکا کبھی دامن ميرا

ميں اچھلتی ہوں کبھی جذب مہ کامل سے
جوش ميں سر کو پٹکتی ہوں کبھی ساحل سے
ہوں وہ رہرو کہ محبت ہے مجھے منزل سے
کيوں تڑپتی ہوں ، يہ پوچھے کوئی ميرے دل سے

زحمت تنگی دريا سے گريزاں ہوں ميں
وسعت بحر کی فرقت ميں پريشاں ہوں ميں

————-

Transliteration

Mouj-e-Darya

Muztarib Rakhta Hai Mera Dil-e-Betab Mujhe
Ayn-e-Hasti Hai Tarap Soorat-e-Seemab Mujhe

Mouj Hai Naam Mera, Behar Hai Payab Mujhe
Ho Na Zanjeer Kabhi Halqa-e-Gardab Mujhe

Aab Mein Misl-e-Hawa Jata Hai Tousan Mera
Khar-e-Mahi Se Na Atka Kabhi Daman Mera

Main Uchalti Hun Kabhi Jazb-e-Mah-e-Kamil Se
Josh Mein Sar Ko Patakti Hun Kabhi Sahil Se

Hun Woh Rahru Ke Mohabbat Hai Mujhe Manzil Se
Kyun Tarapti Hun, Ye Puche Koi Mere Dil Se

Zehmat-e-Tangi-e-Darya Se Garezan Hun Main
Wusaat-e-Behr Ki Furqat Mein Preshan Hun Main

——————-

The Wave Of River

My restless heart doth never keep me still:
This inner core of me is mercury.

They call me wave. The ocean is my goal.
No chain of whirling eddy holdeth me.

My steed like air upon the water rides.
My garment’s hem on thorn of fish e’er tore,

When moon is full sometimes I leap all fey;
Sometimes all mad I dash my head on shore.

I am the pilgrim loving journey’s stage.
Why am I restless? If my heart make quest.

I flee from the cramped torment of the stream,
Away from the sea’s wide spaces, all distressed.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے