Home / علامہ اقبال شاعری / سمجھا لہو کی بوند اگر تو اسے تو خير
Samjha lahu Ki Boond Agr To Isy Tw Khair

سمجھا لہو کی بوند اگر تو اسے تو خير

(Armaghan-e-Hijaz-29)

Samajha Lahoo Ki Boond Agar Tu Isse Tou Khair

(سمجھا لہو کی بوند اگر تو اسے تو خیر)

Thou think’st it a mere drop of blood; well

سمجھا لہو کی بوند اگر تو اسے تو خير
دل آدمی کا ہے فقط اک جذبہء بلند
گردش مہ و ستارہ کي ہے ناگوار اسے
دل آپ اپنے شام و سحر کا ہے نقش بند
جس خاک کے ضمير ميں ہے آتش چنار
ممکن نہيں کہ سرد ہو وہ خاک ارجمند

Translitation

Samjha Lahoo Ki Boond Agar Tu Issay To Khair
Dil Adami Ka Hai Faqt Ek Jazba’ay Buland

Thou think’st it a mere drop of blood; well,
manʹs heart is but lofty ambitions.

Gardish Mah-O-Sitara Ki Hai Nagwaar Isse
Dil Ap Apne Sham-O-Sahar Ka Hai Naqsh Band

The revolutions of moon and stars are not to its liking:
It makes its own nights and days.

Jis Khak Ke Zameer Mein Hai Aatish-E-Chinaar
Mumkin Nahin K Sard Ho Vo Khaak-E-Arjuman

The earth that enshrines in its bosom the fire of plane tree:
this exalted earth can never be dead and cold.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے