سیّد کی لوحِ تُربت

اے کہ تيرا مُرغ جاں تارِ نَفَس ميں ہے اسير
اے کہ تيری روح کا طائر قَفس ميں ہے اسير
اس چمن کے نغمہ پیراؤں کی آزادی تو ديکھ
شہر جو اجڑا ہوا تھا اس کی آبادی تو ديکھ
فکر رہتی تھی مجھے جس کی وہ محفل ہے يہی
صبر و اِستقِلال کی کھيتی کا حاصل ہے يہی

سنگ تُربت ہے مرا  گِرويدَہ ِ تقرير ديکھ
چشم باطن سے ذرا اس لوح کی تَحرير ديکھ

مُدعا تيرا اگر دنيا ميں ہے تعليمِ ديں
ترک دنيا قوم کو اپنی نہ سکھلانا کہيں
وا نہ کرنا فرقہ بندی کے ليے اپنی زُباں
چھپ کے ہے بيٹھا ہوا ہنگامہ مَحشَر يہاں
وصل کے اسباب  پيدا ہوں تری تحرير سے
ديکھ کوئی دل نہ دکھ جائے تری تقرير سے

محفل نَو ميں پُرانی داستانوں کو نہ چھيڑ
رنگ پر جو اب نہ آئيں اُن فسانوں کو نہ چھيڑ

تو اگر کوئی  مُدبّر ہے تو  سُن ميری صدا
ہے دليری دستِ اربابِ سياست کا  عصا
عرضِ مطلب سے جھجک جانا نہيں زيبا تجھے
نيک ہے  نيت اگر تيری  تو   کيا پروا  تجھے

بندہ مومن کا دل بيم و ريا سے پاک ہے
قوت فرماں روا کے سامنے بے باک ہے
ہو اگر ہاتھوں ميں تيرے خامۂ مُعجِز  رقم
شيشہ دل ہو  اگر تيرا  مثالِ جام جم
پاک رکھ اپنی زُباں ، تلميذِ  رَحمانی ہے تو
ہو نہ جائے ديکھنا تيری صدا بے آبرو

سونے والوں کو جگا دے شعر کے اعجاز سے

خِرمَنِ  باطل جلا دے شعلہ آواز سے

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

سیّد: مراد سر سیّد احمد خان جنہو ں نے علی گڑھ میں مسلمانوں کی اعلٰی تعلیم کے لیے کالج کھولا جو اب یو نیورسٹی ہے۔ سر سیّد نے 1898ء میں وفات پائی۔

لوح تربت: قبر پر لگا ہوا کتبہ  –  مرغِ جاں: روح کا پرندہ  –  تارِنفس: سانس کی ڈوری – قفس: پنجرہ، مراد جسم –  نغمہ پیرا: گیت گانے، چہچہانے والے  –  فکر رہنا: تلاش میں رہنا –  صبر و استقلال: قوت برداشت اور  ثابت قدمی (کسی نظریے پر جمے  رہنا)  –   سنگ تربت: قبر پر لگا ہوا پتھر  –  گرویدہ تقریر: بات چیت کرنے کا شوق رکھنے والا  –  چشم باطن: مراد بصیرت  –  لوح: تختی  –  مُدعا: مقصد  –  وا کرنا: کھولنا  –  چھپ کے بیٹھا ہے: مراد ابھی دبا ہوا ہے –  ہنگامہ محشر: قیامت کا فساد، مراد بہت بڑا فتنہ فساد  – وصل: مراد اتفاق و محبت  – دل دُکھنا: دل کو تکلیف پہنچنا  – محفل نو: جدید، نئی دنیا، موجودہ دور  –  پرانی داستان چھیڑنا: پرانے مسئلے چھیڑنا یا ان کو ہوا دینا  –  رنگ پر آنا: پسندیدہ / مقبول ہونا  –  مدبر: سیاست دان  –  صدا: آواز/ نصیحت  –  عرضِ مطلب: اپنی بات بیان کرنا  –  جھجک جانا: رک جانا، ڈر محسوس کرنا  –  بیم و ریا: ہر طرح کا خوف، سیاسی دکھاوا  –  خامہ معجز رقم: ایسی تحریر لکھنے والا قلم جو دوسرا نہ لکھ سکے  –     شیشہ دل: مراد دل  –  جام جم: قدیم ایرنی بادشاہ جمشید کا پیالہ جس میں دنیا نظر آتی تھی  – تلمیذ رحمانی: خدا کا شاگرد۔ عربی کا مقولہ ہے: “الشعراء تلامیذ الرحمان” شاعر خدا کے شاگرد ہیں (الہام ہوتا ہے) ۔  صدا: شاعری  -اعجاز: معجزہ، کرامت  – خرمن باطل: کفر کی فصل  –  شعلہ آواز: مراد پر تاثیر شاعری

————-

Transliteration

Syed Ki Loh-e-Turbat

Ae Ke Tera Murgh-e-Jaan Taar-e-Nafas Mein Hai Aseer
Ae Ke Teri Rooh Rooh Ka Taeer Qafas Mein Hai Aseer

Iss Chaman Ke Naghma Pairaon Ki Azadi To Dekh
Sheher Jo Ujra Huwa Tha, Uss Ki Abadi To Dekh

Fikr Rehti Thi Mujhe Jis Ki Woh Mehfil Hai Yehi
Sabr-o-Istaqlaal Ki Khaiti Ka Hasil Hai Yehi

Sang-e-Turbat Hai Mera Gerwida-e-Taqreer Dekh
Chashm-e-Batin Se Zara Iss Loh Ki Tehreer Dekh

Mudda Tera Agar Dunya Mein Hai Taleem-e-Den
Turk-e-Dunya Qoum Ko Apni Na Sikhlana Kahin

Wa Na Karna Firqa Bandi Ke Liye Apni Zuban
Chup Ke Hai Baitha Huwa Hangama-e-Mehshar Yahan

Wasl Ke Asbab Paida Hon Teri Tehreer Se
Dekh! Koi Dil Na Dukh Jaye Teri Taqreer Se

Mehfil-e-Nau Mein Purani Dastanon Ko Na Chhair
Rang Par Jawab Na Ayen Un Afsanon Ko Na Chhair

Tu Agar Koi Mudabbar Hai To Sun Meri Sada
Hai Dalairi Dast-e-Arbab-e-Siasat Ka Asa

Arz-e-Matlab Se Jhijhak Jana Nahin Zaiba Tujhe
Naik Hai Niyyat Agar Teri To Kya Parwa Tujhe

Banda-e-Momin Ka Dil Beem-o-Riya Se Paak Hai
Quwwat-e-Farman-Rawa Ke Samne Bebaak Hai

Ho Agar Hathon Mein Tere Khana-e-Maujiz Raqam
Sheesha-e-Dil  Ho Agar Tera Misal-e-Jaam-o-Jam

Paak Rakh Apni Zuban, Talmeez-e-Rehmani Hai Tu
Ho Na Jaye Dekhna Teri Sada Be-Abru!

Sone Walon Ko Jaga De Shair Ke Ejaz Se
Khirman-e-Batil Jala De Shaola-e-Awaz Se

——————-

The Tombstone Of Sayyid

O you whose life is confined in the material world
O you whose soul is imprisoned in the cage

Look at the freedom of this garden’s warblers
Look at the prosperity of those once desolate

This is the congregation with which I was concerned
This is the reward of patience and perseverance

My tomb‐stone is ardently desirous of speech, look!
At this tomb‐stone’s inscription with insight look!

If your aim in the world is din’s education
Never teach your nation world’s abdication

Do not use your tongue for sectarianism
Resurrection Day’s tumult for booty is stalking

Your writings should pave the way for unity
Beware! No heart should be hurt by your speech

In the new congregation do not start old tales
Do not start again what are now unacceptable tales

Listen to my advice if you are any statesman
Courage is your support if you are a leader of men

Hesitation in expressing your purpose does not behoove you
If your intentions are good you should not fear anything

The Mu’min’s heart is clear of fear and hypocrisy
The Mu’min’s heart is fearless against the ruler’s power

If your hands do hold the miraculous pen
If your heart’s cup is clear like the cup of Jam

You are a Divine pupil! Keep your tongue immaculate!
Beware, Lest your prayer’s call remains unanswered!

With the miracle of your verse awaken those sleeping
Burn down falsehood’s produce with the flame of your call.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے