Home / علامہ اقبال شاعری / موت ہے اک سخت تر جس کا غلامي ہے نام
Moot Hay Ik Sakhat Ter Jiska Gulami Hy Name

موت ہے اک سخت تر جس کا غلامي ہے نام

(Armaghan-e-Hijaz-23)

Mout Hai Ek Sakht Ter Jis Ka Ghulami Hai Naam

(موت ہے اک سخت تر جس کا غلامی ہے نام)

Harder than death is what thou call’st slavery

موت    ہے اک سخت تر جس کا غلامي ہے نام
مکر و فن خواجگي کاش سمجھتا غلام

شرع ملوکانہ ميں جدت احکام ديکھ
صور کا غوغا حلال، حشر کي لذت حرام!

اے کہ غلامي سے ہے روح تري مضمحل
سينہء بے سوز ميں ڈھونڈ خودي کا مقام

Transliteration

Mout Hai Ek Sakht Tar Jis Ka Ghlami Hai Naam
Makar-O-Fan-E-Khawajgi Kash Samajhta Ghulam !

Harder than death is what thou call’st slavery,
would that slaves understand master’s tricks;

Shara-E-Malookana Mein Jiddat-E-Ehkaam Dekh
Soor Ka Ghogha Hilal, Hashar Ki Lazzat Haram !

Strange are the ways of imperialists:
they allow the sounding of trumpet; but forbid resurrection.

Ae Kh Ghulami Se Hai Rooh Teri Muzmahil
Sina’ay Be-Soz Mein Dhoond Khudi Ka Maqam !

Thy soul is weary under the stress of slavery,
build niche for khudi in thy impassive breast

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے