صدائے درد

جل رہا ہوں کل نہيں پڑتی کسی پہلو مجھے

ہاں ڈبو دے اے محيط آب گنگا تو مجھے

سرزميں اپنی قيامت کی نفاق انگيز ہے

وصل کيسا ، ياں تو اک قرب فراق انگيز ہے

بدلے يک رنگی کے يہ نا آشنائی ہے غضب

ايک ہی خرمن کے دانوں ميں جدائی ہے غضب

جس کے پھولوں ميں اخوت کی ہوا آئی نہيں

اس چمن ميں کوئی لطف نغمہ پيرائی نہيں

لذت قرب حقيقی پر مٹا جاتا ہوں ميں

اختلاط موجہ و ساحل سے گھبراتا ہوں ميں

دانہ خرمن نما ہے شاعر معجز بياں

ہو نہ خرمن ہی تو اس دانے کی ہستی پھر کہاں

حسن ہو کيا خود نما جب کوئی مائل ہی نہ ہو

شمع کو جلنے سے کيا مطلب جو محفل ہی نہ ہو

ذوق گويائی خموشی سے بدلتا کيوں نہيں

ميرے آئينے سے يہ جوہر نکلتا کيوں نہيں

کب زباں کھولی ہماری لذت گفتار نے

پھونک ڈالا جب چمن کو آتش پيکار نے

—————

کل نہ پڑنا: چین نہ آنا، بیقراری، کسی پہلو: کسی طرح بھی، محیط: دریا کا پاٹ، آب گنگا: دریائے گنگا ہندوؤں کا بہت مقدس دریا، قیامت کی: بیحد، بہت زیادہ، نفاق انگیز: آپس میں پھوٹ/نااتفاقی ڈالنے والی، قرب فراق آمیز: ایسی نزدیکی جس میں دوری شامل ہو،(ہندوؤں اور مسلمانوں میں ناچاقی کی طرف اشارہ ہے)، غضب ہے؛ دکھ کی بات  ہے، خرمن: غلے کا ڈھیر، نغمہ پیرائی: گیت گانا، قرب حقیقی: مراد صحیح معنوں میں دوستی /بھائی چارا، مٹا جانا: کسی چیز/بات سے بیحد لگاؤہونا، اختلاط: باہم ملنا، موجہ و ساحل: لہر اور کنارہ، دانہ خرمن نما: ایسا دانہ جس سے پورے کھلیان کا پتا چل جائے(دانہ مراد شاعراور خرمن مراد قوم) ، شاعرمعجزبیان: معجزے کی سی فصیح شاعری کرنے والا، مائل: توجہ کرنے/دیکھنے والا، خود نما: اپنے حسن کی نمائش کرنےوالا، ذوق گویائی: بولنے کا شوق، جوہر: مراد چمک دمک، زبان کھولنا: بولنا، لذت گفتار: بولنے کا مزہ، پھونک ڈالا: جلا ڈالا، آتشں پیکار: مراد دو قوموں(ہندو، مسلم) کی باہمی دشمنی، 

—————

 

Transliteration

 

Sadaye Dard

Jal Raha Hun Kal Nahin Parti Kisi Pehlu Mujhe
Haan Dabo De Ae Muheet-e-Aab-e-Ganga Tu Mujhe

Sarzameen Apni Qayamat Ki Nafaq-Angaiz Hai
Wasl Kaisa, Yaan To Ek Qurb-e-Firaq Angaiz Hai

 

Badle Yak Rangi Ke Ye  Nashnayi Hai Ghazab

Aik Hi Khirman Ke Danon Mein Judai Hai Ghazab

Jis Ke Phoolon Mein Akhuwat Ki Hawa Ayi Nahin
Uss Cchaman Mein Koi Lutf-e-Naghma Pairayi Nahin

Lazzat-e-Qurb-e-Haqiqi Par Mita Jata Hun Main
Ikhtilat-e-Mouja-o-Sahil Se Ghabrata Hun Main

Dana-e-Khirman Numa Hai Shayar-e-Maujiz Byan
Ho Na Khirman Hi To Iss Dane Ki Hasti Phir Kahan

Husn Ho Kya Khudnuma Jab Koi Maeel Hi Na Ho
Shama Ko Jalne Se Kya Matlab Jo Mehfil Hi Na Ho

Zauq-e-Goyai Khamoshi Se Badalta Kyun Nahin
Mere Aaeene Se Ye Johar Nikalta Kyun Nahin

Kaab Zuban Kholi Humari Lazzat-e-Guftar Ne!
Phoonk Dala Jab Chaman Ko Aatish-e-Paikar Ne

———————–

The Painful Wail

Consumed with grief I am, I get relief in no way
O circumambient waters of the Ganges drown me

Our land foments excessive mutual enmity
What unity! Our closeness harbors separation

Enmity instead of sincerity is outrageous
Enmity among the same barn’s grains is outrageous

If the brotherly breeze has not entered in a garden
No pleasure can be derived from songs in that garden

Though I exceedingly love the real closeness
I am upset by the mixing of waves and the shore

The miraculous poet is like the grain from the barn
The grain has no existence if there is no barn

How can beauty unveil itself if no one is anxious for sight
Lighting of the candle is meaningless if there is no assembly

Why does the taste for speech not change to silence
Why does this brilliance not appear out from my mirror

Alas! My tongue poured its speech down
When war’s fire had burnt the garden down

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے