Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ اول) / مٹا ديا مرے ساقی نے عالم من و تو

مٹا ديا مرے ساقی نے عالم من و تو

مٹا ديا مرے ساقی نے عالم من و تو
پلا کے مجھ کو مے لا الہ الا ھو’
نہ مے ،نہ شعر ، نہ ساقی ، نہ شور چنگ و رباب
سکوت کوہ و لب جوے و لالہ خود رو
گدائے مے کدہ کی شان بے نيازی ديکھ
پہنچ کے چشمہ حيواں پہ توڑتا ہے سبو
مرا سبوچہ غنيمت ہے اس زمانے ميں
کہ خانقاہ ميں خالی ہيں صوفيوں کے کدو
ميں نو نياز ہوں ، مجھ سے حجاب ہی اولی
کہ دل سے بڑھ کے ہے ميری نگاہ بے قابو
اگرچہ بحر کی موجوں ميں ہے مقام اس کا
صفائے پاکی طينت سے ہے گہر کا وضو
جميل تر ہيں گل و لالہ فيض سے اس کے
نگاہ شاعر رنگيں نوا ميں ہے جادو

————————-

Translation

Mitta Diya Mere Saqi Ne Alam-E-Mann-o-Tu
Pila Ke Mujh Ko Mai-e-‘La ILLAHA ILLAH HOO’

Na Mai, Na Shair, Na Saqi, Na Shor-E-Ching-o-Rabab
Sakoot-e-Koh-o-Lab-e-Jooy-e-Lala’ay Khudroo !

Gada’ay May Kudah Ki Shan-e-Be-Niazi Dekh
Pohanch Ke Chashma’ay Hiwan Pe Torhta Hai Saboo !

Mera Saboocha Ghanimat Hai Iss Zamane Mein
Ke Khanqah Mein Khali Hain Sufiyon Ke Kadoo

Mein No Niaz Hun, Mujh Se Hijab Hi Aola
Ke Dil Se Barh Ke Hai Meri Nigah Be Qaboo

Agarcha Behar Ki Moujon Mein Hai Maqam Uss Ka
Safa’ay Paki Tiniat Se Hai Guhar Ka Wazoo

Jameel Tar Hain Gul-o-Lala Faiz Se Uss Ke
Nigah-e-Shayar-e-Rangeen Nawa Mein Hai Jadoo

———————-

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے