Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / با ل جبر یل - رباعيات / قطعہ اقبال نے کل اہل خياباں کو سنايا

قطعہ اقبال نے کل اہل خياباں کو سنايا

اقبال نے کل اہل خياباں کو سنايا
يہ شعر نشاط آور و پر سوز طرب ناک
ميں صورت گل دست صبا کا نہيں محتاج
کرتا ہے مرا جوش جنوں ميری قبا چاک

—————————–

Transliteration

Iqbal Ne Kal Ahl-e-Khayaban Ko Sunaya
Ye Shair-e-Nishat Awar-o-Pursouz-o-Tarabnak

Iqbal recited once in a garden in Spring
A couplet cheerful and bright in tone and spirit:

Main Soorat-e-Gul Dast-e-Saba Ka Nahin Mouhtaj
Karta Hai Mera Josh-e-Junoon Meri Qaba Chaak

Unlike the rose, I need no breeze to blossom.,
My soul doth blossom with my ecstasy.

————————–

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے