Home / علامہ اقبال شاعری / حاجت نہيں اے خطہ گل شرح و بياں کي
Hajat Nahi Ay Khitta e Gull Sharah o Biyaan Ki

حاجت نہيں اے خطہ گل شرح و بياں کي

(Armaghan-e-Hijaz-37)

Hajat Nahin Ae Khita’ay Gul Sharah-o-Byan Ki

(حاجت نہیں اے خطہ گل شرح و بیان کی)

O land of charming and sweet flowers what need is there to explain

حاجت نہيں اے خطہ گل شرح و بياں کي
تصوير ہمارے دل پر خوں کي ہے لالہ
تقدير ہے اک نام مکافات عمل کا
ديتے ہيں يہ پيغام خدايان ہمالہ
سرما کي ہواؤں ميں ہے عرياں بدن اس کا
ديتا ہے ہنر جس کا اميروں کو دوشالہ
اميد نہ رکھ دولت دنيا سے وفا کي
رم اس کي طبيعت ميں ہے مانند غزالہ
حاجت نہيں اے خطہ گل شرح و بياں کي
تصوير ہمارے دل پر خوں کي ہے لالہ
تقدير ہے اک نام مکافات عمل کا
ديتے ہيں يہ پيغام خدايان ہمالہ*
سرما کي ہواؤں ميں ہے عرياں بدن اس کا
ديتا ہے ہنر جس کا اميروں کو دوشالہ
اميد نہ رکھ دولت دنيا سے وفا کي
رم اس کي طبيعت ميں ہے مانند غزالہ

*خدایانِ ہمالیہ—— ہمالیہ کے دامن میں رہنے والے ہندو پیشوا

Translitation

Hajat Nahin Ae Khitta’ay Gul Sharah-O-Bayan Ki
Tasveer Humare Dil-E-Purkhoon Ki Hai Lalah

O land of charming and sweet flowers what need is there to explain:
the burning red tulip, grief‐stricken and sad, best reflects our bloody heart.

Taqdeer Hai Ek Naam Makafat-E-Amal Ka
*Dete Hain Ye Pegham Khudayan-E-Hamala

The god Himalayas* speak thus to thee, to me and to all:
Fate is a name we give to the retribution of what we do and act.

*God Himalaya ------ Hindu pride living in the valley of Himalayas

Sarma Ki Hawaon Mein Hai Uryan Badan Uss Ka
Deta Hai Hunar Jis Ameeron Ko Doshala

In the bitter winds of winter, the poor labourer works in a naked body,
though his skill provides shawls to the rich.

Umeed Na Rakh Doulat-E-Dunya Se Wafa Ki
Ram Uss Ki Tabiyat Mein Hai Manind-E-Ghazala

The world shall never be loyal to thee:
it is and has been ever in flux.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے