Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / گرم فغاں ہے جرس ، اٹھ کہ گيا قافلہ

گرم فغاں ہے جرس ، اٹھ کہ گيا قافلہ


گرم فغاں ہے جرس ، اٹھ کہ گيا قافلہ
وائے وہ رہرو کہ ہے منتظر راحلہ !
تيری طبيعت ہے اور ، تيرا زمانہ ہے اور
تيرے موافق نہيں خانقہی سلسلہ
دل ہو غلام خرد يا کہ امام خرد
سالک رہ ، ہوشيار! سخت ہے يہ مرحلہ
اس کی خودی ہے ابھی شام و سحر ميں اسير
گردش دوراں کا ہے جس کی زباں پر گلہ
تيرے نفس سے ہوئی آتش گل تيز تر
مرغ چمن! ہے يہی تيری نوا کا صلہ

——————-

Translation

Garam-e-Gaghan Hai Jaras, Uth Ke Gya Qafla
Waye Woh Rehru Ke Hai Muntazir-e-Rahla !

Teri Tabiyat Hai Aur, Tera Zamana Hai Aur
Tere Muwafiq Nahin Khanqahi Silsala

Dil Ho Ghulam-e-Khirad Ya Ke Imam-e-Khirad
Salik-e-Rah, Hoshiyar ! Sakht Hai Ye Marhala

Uss Ki Khudi Hai Abhi Sham-o-Sehar Mein Aseer
Gardish-e-Doran Ka Hai Jis Ki Zuban Par Gila

Tere Nafs Se Huwi Atish-e-Gul Taiz Tar
Murg-e-Chaman! Hai Yehi Teri Nawa Ka Sila
————————————–

Arise! The bugle calls! It is time to leave!
Woe be to the traveller who still awaits!

The confines of a monastery suit thee not—
The times have changed, thou seest, and so hast thou.

Thorny is the path, O seeker of salvation!
Whether thy heart is the slave or the master of reason.

The selfhood of one who bemoans all change,
Is yet a prisoner of time, shackled by days and nights.

O songbird! Thy song is well rewarded when
It infuses fire into the rose’s bloom.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے