Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / با ل جبر یل - منظو ما ت / عبد الرحمن اول کا بويا ہوا کھجور کا پہلا درخت سرزمين اندلس ميں

عبد الرحمن اول کا بويا ہوا کھجور کا پہلا درخت سرزمين اندلس ميں

يہ اشعار جو عبد الرحمن اول کی تصنيف سے ہيں ، ‘تاريخ المقری’
ميں درج ہيں مندرجہ ذيل اردو نظم ان کا آزاد ترجمہ ہے
درخت مذکور مدينتہ الزہرا ميں بويا گيا تھا

ميری آنکھوں کا نور ہے تو
ميرے دل کا سرور ہے تو
اپنی وادی سے دور ہوں ميں
ميرے ليے نخل طور ہے تو
مغرب کی ہوا نے تجھ کو پالا
صحرائے عرب کی حور ہے تو
پرديس ميں ناصبور ہوں ميں
پرديس ميں ناصبور ہے تو
غربت کی ہوا ميں بارور ہو
ساقی تيرا نم سحر ہو
عالم کا عجيب ہے نظارہ
دامان نگہ ہے پارہ پارہ
ہمت کو شناوری مبارک!
پيدا نہيں بحر کا کنارہ
ہے سوز دروں سے زندگانی
اٹھتا نہيں خاک سے شرارہ
صبح غربت ميں اور چمکا
ٹوٹا ہوا شام کا ستارہ
مومن کے جہاں کی حد نہيں ہے
مومن کا مقام ہر کہيں ہے

———————–

Transliteration

Abdur Rehman Awwal Ka Boya Huwa Khajoor Ka Pehla Darakht

Sar Zameen-e-Andus Mein

Ye Ashaar Jo Abdur Rehman Awal Ki Tasneef Se Hain, ‘Tareekh Ul Maqra’ Mein Darj Hain, Mundarja  Zail  Urdu Nazam In Ka Azad Tarjuma Hai (Darakh Mazkoor Madina-Tuz-Zahra Mein Boya Gya Tha)

Meri Ankhon Ka Noor Hai Tu
Mere Dil Ka Suroor Hai Tu

Apni Wadi Se Door Hun Main
Mere Liye Nakhl-e-Toor Hai Tu

Maghrib Ki Hawa Ne Tujh Ko Pala
Sehra-e-Arab Ki Hoor Hai Tu

Pardais Mein Na-Saboor Hun Main
Pardais Mein Na-Saboor Hai Tu

Ghurbat Ki Hawa Mein Bar-War Ho
Saqi Tera Nam-e-Sehar Ho

Alam Ka Ajeeb Hai Nazara
Damaan-e-Nigah Hai Para Para

Himmat Ko Shanawari Mubarik!
Paida Nahin Behar Ka Kinara

Hai Souz-e-Daroon Se Zindagaani
Uthta Nahin Khaak Se Sharara

Subah-e-Ghurbat Mein Aur Chamka
Toota Huwa Shaam Ka Sitara

Momin Ke Jahan Ki Had Nahin Hai
Momin Ka Maqam Har Kahin Hai

————————–

FIRST DATE TREE SEEDED BY ABDUL RAHMAN THE FIRST

These verses from Abdul Rahman the First are quoted in Tarikh al Muqqari. The following Urdu poem is a liberal translation (the tree mentioned here was planted in Madinatut Zahra)

You are the apple of my eye,
My heart’s delight:

I am remote from my valley,
To me you are the Burning Bush of Sinai!

I feel homesick in exile,
You feel homesick in exile:

Prosper in this strange land!
May the morning dew quench your thirst!

The world presents a strange sight:
The vision’s mantle is torn apart

May valour struggle with the waves if it must,
The other side of the river is not to be seen!

Life owes itself to the heat of one’s soul:
Flame does not rise from dust.

The Syrian evening’s fallen star
Shined brighter in the exile’s dawn.

There are no frontiers for the Man of Faith,
He is at home everywhere.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے