Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / خرد نے مجھ کو عطا کی نظر حکيمانہ
Khirad Ne Mujh Ko Atta Ki Nazar Hakeemana

خرد نے مجھ کو عطا کی نظر حکيمانہ


خرد نے مجھ کو عطا کی نظر حکيمانہ
سکھائی عشق نے مجھ کو حديث رندانہ
نہ بادہ ہے ، نہ صراحی ، نہ دور پيمانہ
فقط نگاہ سے رنگيں ہے بزم جانانہ
مری نوائے پريشاں کو شاعری نہ سمجھ
کہ ميں ہوں محرم راز درون ميخانہ
کلی کو ديکھ کہ ہے تشنہ نسيم سحر
اسی ميں ہے مرے دل کا تمام افسانہ
کوئی بتائے مجھے يہ غياب ہے کہ حضور
سب آشنا ہيں يہاں ، ايک ميں ہوں بيگانہ
فرنگ ميں کوئی دن اور بھی ٹھہر جاؤں
مرے جنوں کو سنبھالے اگر يہ ويرانہ
مقام عقل سے آساں گزر گيا اقبال
مقام شوق ميں کھويا گيا وہ فرزانہ

———————–

Translation

(Yourap Mein Likhe Gye)

Khirad Ne Mujh Ko Atta Ki Nazar Hakeemana
Sikhai Ishq Ne Mujh Ko Hadees-e-Rindana

Na Bada Hai, Na Soorahi, Na Dour-e-Pemana
Faqt Nigah Se Rangeen Hai Bazm-e-Janana

Meri Nuwa-e-Preshan Ko Shayari Na Samajh
Ke Main Hun Mehram-e-Raaz-e-Darun-e-Maikhana

Kali Ko Dekh Ke Hai Tashna-e-Naseem-e-Sehar
Issi Mein Hai Mere Dil Ka Tamam Afsana

Koi Bataye Mujhe Ye Ghayaab Hai Ke Huzoor
Sub Ashna Hain Yahan, Aik Main Hun Begana

Farang Mein Koi Din Aur Bhi Thehar Jaun
Mere Junoon Ko Sanbhale Agar Ye Werana

Maqam-e-Aqal Se Asan Guzar Gya Iqbal
Maqam-e-Shauq Mein Khoya Gya Woh Farzana

————————-

(Written in Europe)

My mind on me bestowed a thinker’s gaze,
From Love I learnt a toper’s wont and ways.

No wine, no flask, no goblet goes around,
Sweet looks to banquet lend its hue and sound.

Take not my rhymes for poet’s art,
I know the secrets of wine‐seller’s mart.
(Wine symbolically used)

Behold the bud athirst for breath of Morn,
It tells the story of my heart forlorn.

Know not, absence or presence if it be,
I am the alien here, all others free.

My stay in West I may prolong a bit,
My frenzy if this desert will admit.

The stage of mind by Iqbal soon was crost,
But in the Vale of Love this sage was lost.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے