Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / خودی وہ بحر ہے جس کا کوئی کنارہ نہيں
Khudi Woh Behar Hai Jis Ka Koi Kinara Nahin

خودی وہ بحر ہے جس کا کوئی کنارہ نہيں


خودی وہ بحر ہے جس کا کوئی کنارہ نہيں
تو آبجو اسے سمجھا اگر تو چارہ نہيں
طلسم گنبد گردوں کو توڑ سکتے ہيں
زجاج کی يہ عمارت ہے ، سنگ خارہ نہيں
خودی ميں ڈوبتے ہيں پھر ابھر بھی آتے ہيں
مگر يہ حوصلہ مرد ہيچ کارہ نہيں
ترے مقام کو انجم شناس کيا جانے
کہ خاک زندہ ہے تو ، تابع ستارہ نہيں
يہيں بہشت بھی ہے ، حور و جبرئيل بھی ہے
تری نگہ ميں ابھی شوخی نظارہ نہيں
مرے جنوں نے زمانے کو خوب پہچانا
وہ پيرہن مجھے بخشا کہ پارہ پارہ نہيں
غضب ہے ، عين کرم ميں بخيل ہے فطرت
کہ لعل ناب ميں آتش تو ہے ، شرارہ نہيں

—————————-

Translation

Khudi Woh Behar Hai Jis Ka Koi Kinara Nahin
Tu Aabjoo Usse Samjha Agar To Chara Nahin

Tilism-e-Gunbad-e-Gardoon Ko Torh Sakte Hain
Zujaj Ki Ye Amarat Hai, Sang-e-Khara Nahin

Khudi Mein Doobte Hain Phir Ubhar Bhi Ate Hain
Magar Ye Hosla-e-Mard-e-Haichkarah Nahin

Tere Maqam Ko Anjum Shanas Kya Jane
Ke Khak-e-Zinda Hai Tu, Taba-e-Sitara Nahin

Yahin Behisht Hi Hai, Hoor-o-Jibreel Bhi Hai
Teri Nigah Mein Abhi Shaukhi-e-Nazara Nahin

Mere Junoon Ne Zamane Ko Khoob Pehchana
Woh Pairhan Mujhe Bakhsha Ke Para Para Nahin

Ghazab Hai, Ayin-e-Karam Mein Bukheel Hai Fitrat
Ke Laal-e-Naab Mein Atish To Hai, Sharara Nahin

————————-

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے