گُلزارِ ہَست و بُود نہ بيگانہ وار ديکھ

گُلزارِ ہَست و بُود  نہ  بيگانہ وار ديکھ
ہے ديکھنے کی چيز  اِسے  بار بار ديکھ
آياہے تو جہاں ميں مِثالِ شرار ديکھ
دَم دے نہ جائے ہستیِ ناپائدار ديکھ
ماناکہ تيری ديد کے قابل نہيں ہوں ميں
توميرا شوق ديکھ، مرا انتظار ديکھ

کھولی ہيں ذوقِ ديد نے آنکھيں تری اگر
ہررہ گُزر ميں نقشِ کفِ پائے يار ديکھ


 گلزارِ: باغ – ہست و بود: آج اور کل

گلزارِ ہست و بود: مراد دنیا – بيگانہ وار: غیروں کی طرح – مثالِ شرار: مراد چنگاری کی طرح تھوڑی زندگی والا

 دم دینا: دھوکہ دینا – ہستیِ ناپائدار: فانی زندگی – ديد: دیدار  ذوقِ ديد: محبوب کے دیکھنے کا شوق – رہ گزر: راستہ

نقشِ: نشان –

کفِ پائے يار: محبوب کے پاؤں کے تلوے


 Transliteration

Gulzar-e-Hast-o-Bood Na Beganawar Dekh
Hai Dekhne Ki Cheez Isse Bar Bar Dekh

 

Aya Hai Tu Jahan Mein Msal-e-Sharar Dekh
Dam De Na Jaye Hasti-e-Na-Paidar Dekh

 

Mana Ke Teri Deed Ke Qabil Nahin Hun Main
Tu Mera Shauq Dekh, Mera Intizar Dekh

 

Kholi Hain Zauq-e-Deed Ne Ankhain Teri Agar
Har Reh Guzar Mein Naqsh-e-Kaf-e-Paye Yaar Dekh

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے