Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / حادثہ وہ جو ابھی پردہ افلاک ميں ہے

حادثہ وہ جو ابھی پردہ افلاک ميں ہے


حادثہ وہ جو ابھی پردہ افلاک ميں ہے
عکس اس کا مرے آئينہ ادراک ميں ہے
نہ ستارے ميں ہے ، نے گردش افلاک ميں ہے
تيری تقدير مرے نالہ بے باک ميں ہے
يا مری آہ ميں کوئی شرر زندہ نہيں
يا ذرا نم ابھی تيرے خس و خاشاک ميں ہے
کيا عجب ميری نوا ہائے سحر گاہی سے
زندہ ہو جائے وہ آتش کہ تری خاک ميں ہے
توڑ ڈالے گی يہی خاک طلسم شب و روز
گرچہ الجھی ہوئی تقدير کے پيچاک ميں ہے

—————————

Translation

Hadsa Woh Jo Abhi Parda-e-Aflak Mein Hai
Aks Uss Ka Mere Aaeena-e-Idraak Mein Hai

Na Sitare Mein Hai, Ne Gardish-e-Aflak Mein Hai
Teri Taqdeer Mere Nala-e-Bebaak Mein Hai

Ya Meri Aah Mein Koi Sharar-e-Zinda Nahin
Ya Zara Nam Abhi Tere Khs-o-Khashak Mein Hai

Kya Ajab Meri Nawa Haye Sehargahi Se
Zinda Ho Jaye Woh Atish Ke Teri Khak Mein Hai

Tor Dale Gi Yehi Khak Tilism-e-Shab-o-Roz
Gharche Uljhi Huwi Taqdeer Ke Paichaak Mein Hai

————————————–

Events as yet folded in the scroll of Time
Reflect in the mirror of my perception.

Neither the planets, nor the spinning skies—
Only my bold song—can tell you your destiny.

Either my sighs are devoid of fire,
Or else your straw and thorns as yet retain some sap;

Yet perchance my morning song
May quicken the fire that your dust contains—

The dust that will break the spell of the passing time one day,
Though it is entangled in the skein of Fate as yet.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے