Tera Wajood Sarapa Tajjli Afrang

افرنگ زدہ

(1)

ترا وجود سراپا تجلی افرنگ
کہ تو وہاں کے عمارت گروں کی ہے تعمير
مگر يہ پيکر خاکی خودی سے ہے خالی
فقط نيام ہے تو، زرنگار و بے شمشير

(2)

تری نگاہ ميں ثابت نہيں خدا کا وجود
مری نگاہ ميں ثابت نہيں وجود ترا
وجود کيا ہے، فقط جوہر خودی کی نمود
کر اپنی فکر کہ جوہر ہے بے نمود ترا

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے