Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / رہا نہ حلقہ صوفی ميں سوز مشتاقی

رہا نہ حلقہ صوفی ميں سوز مشتاقی


رہا نہ حلقہ صوفی ميں سوز مشتاقی
فسانہ ہائے کرامات رہ گئے باقی
خراب کوشک سلطان و خانقاہ فقير
فغاں کہ تخت و مصلی کمال زراقی
کرے گی داور محشر کو شرمسار اک روز
کتاب صوفی و ملا کی سادہ اوراقی
نہ چينی و عربی وہ ، نہ رومی و شامی
سما سکا نہ دو عالم ميں مرد آفاقی
مئے شبانہ کی مستی تو ہو چکی ، ليکن
کھٹک رہا ہے دلوں ميں کرشمہ ساقی
چمن ميں تلخ نوائی مری گوارا کر
کہ زہر بھی کبھی کرتا ہے کار ترياقی
عزيز تر ہے متاع امير و سلطاں سے
وہ شعر جس ميں ہو بجلی کا سوز و براقی

——————-

Translation

Raha Na Halqa-e-Sufi Mein Souz-e-Mushtaqi
Fasana Haye Karamaat Reh Gye Baqi

Kharab Ko Shak-e-Sultan-O-Khanqah-e-Faqeer
Faghan Ke Takht-O-Musalla Kamal-e-Zarraqi

Kare Gi Dawar-e-Mehshar Ko Sharamsaar Ek Roz
Kitab-e-Sufi-O-Mullah Ki Sada Auraqi

Na Cheeni-O-Arabi Woh, Na Rumi-O-Shami
Sama Saka Na Do Alam Mein Mard-e-Afaqi

Mai-e-Shabana Ki Masti To Ho Chuki, Lekin
Khatak Raha Hai Dilon Mein Karishma-e-Saqi

Chaman Mein Talakh Nawayi Meri Gawara Kar
Ke Zehar Bhi Kabhi Karta Hai Kar-e-Taryaqi

Aziz Tat Hai Mataa-e-Ameer-O-Sultan Se
Woh Shair Jis Mein Ho Bijli Ka Souz-O-Barraqi

————————————–

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

فقر کے ہيں معجزات تاج و سرير و سپاہ

فقر کے ہيں معجزات تاج و سرير و سپاہ فقر ہے ميروں کا مير ، …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے