Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / يہ پيام دے گئی ہے مجھے باد صبح گاہی

يہ پيام دے گئی ہے مجھے باد صبح گاہی


يہ پيام دے گئی ہے مجھے باد صبح گاہی
کہ خودی کے عارفوں کا ہے مقام پادشاہی
تری زندگی اسی سے ، تری آبرو اسی سے
جو رہی خودی تو شاہی ، نہ رہی تو روسياہی
نہ ديا نشان منزل مجھے اے حکيم تو نے
مجھے کيا گلہ ہو تجھ سے ، تو نہ رہ نشيں نہ راہی
مرے حلقہ سخن ميں ابھی زير تربيت ہيں
وہ گدا کہ جانتے ہيں رہ و رسم کجکلاہی
يہ معاملے ہيں نازک ، جو تری رضا ہو تو کر
کہ مجھے تو خوش نہ آيا يہ طريق خانقاہی
تو ہما کا ہے شکاری ، ابھی ابتدا ہے تيری
نہيں مصلحت سے خالی يہ جہان مرغ و ماہی
تو عرب ہو يا عجم ہو ، ترا لا الہ الا
لغت غريب ، جب تک ترا دل نہ دے گواہی

———————

Translation

Ye Peyam De Gyi Hai Mujhe Bad-e-Subahgahi
Ke Khudi Ke Arifon Ka Hai Maqam Padshahi

Teri Zindagi Issi Se, Teri Aabru Issi Se
Jo Rahi Khudi To Shahi, Na Rahi To Roosiyahi

Na Diya Nishan-e-Manzil Mujhe Ae Hakeem Tu Ne
Mujhe Kya Gila Ho Tujh Se, Tu Na Reh Nasheen Na Rahi

Mere Halqa-e-Sukhan Mein Abhi Zair-e-Tarbiat Hain
Woh Gada Ke Jante Hain Rah-o-Rasm-e-Kajkalahi

Ye Maamle Hain Nazuk, Jo Teri Raza Ho Tu Kar
Ke Mujhe To Khush Na Aya Ye Tareeq-e-Khanqahi

Tu Huma Ka Hai Shikari, Abhi Ibtada Hai Teri
Nahin Muslihat Se Khali Ye Jahan-e-Murg-o-Mahi

Tu Arab Ho Ya Ajam Ho, Tera ‘LA ILAHA ILLAH’
Lughat-e-Ghareeb, Jab Tak Tera Dil Na De Gawahi

————————-

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے