Wo Sahib Tuhfa e Alaaqaiyn, Arbab Nazer Ka Qurrah Ul Aain

خاقانی


وہ صاحب ‘تحفہ العراقين
ارباب نظر کا قرہ العين
ہے پردہ شگاف اس کا ادراک
پردے ہيں تمام چاک در چاک
خاموش ہے عالم معاني
‘کہتا نہيں حرف ‘لن تراني
پوچھ اس سے يہ خاک داں ہے کيا چيز
ہنگامہ اين و آں ہے کيا چيز
وہ محرم عالم مکافات
اک بات ميں کہہ گيا ہے سو بات

خود بوے چنيں جہاں تواں برد”
کابليس بماند و بوالبشر مرد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے