غزل

نہ ميں اعجمي نہ ہندي ، نہ عراقي و حجازي
کہ خودي سے ميں نے سيکھي دوجہاں سے بے نيازي
تو مري نظر ميں کافر ، ميں تري نظر ميں کافر
ترا ديں نفس شماري ، مرا ديں نفس گدازي
تو بدل گيا تو بہتر کہ بدل گئي شريعت
کہ موافق تدرواں نہيں دين شاہبازي
ترے دشت و در ميں مجھ کو وہ جنوں نظر نہ آيا
کہ سکھا سکے خرد کو رہ و رسم کارسازي

نہ جدا رہے نوا گر تب و تاب زندگي سے
کہ ہلاکي امم ہے يہ طريق نے نوازي

 

About محمد نظام الدین عثمان

Check Also

Is Byhas Ka Kuch Faisla Main Naheen Kar Sakta

آزادی نسواں

اس بحث کا کچھ فيصلہ ميں کر نہيں سکتا گو خوب سمجھتا ہوں کہ يہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے