Home / علامہ اقبال شاعری / با ل جبر یل / بال جبریل (حصہ دوم) / انداز بياں گرچہ بہت شوخ نہيں ہے

انداز بياں گرچہ بہت شوخ نہيں ہے

قطعہ

انداز بياں گرچہ بہت شوخ نہيں ہے

انداز بياں گرچہ بہت شوخ نہيں ہے
شايد کہ اتر جائے ترے دل ميں مری بات
يا وسعت افلاک ميں تکبير مسلسل
يا خاک کے آغوش ميں تسبيح و مناجات
وہ مذہب مردان خود آگاہ و خدا مست
يہ مذہب ملا و جمادات و نباتات

———————

Translation

Andaz-e-Byan Gharche Bohat Shaukh Nahin Hai
Shaid Ke Utar Jaye Tere Dil Mein Meri Baat

Ya Wusaat-e-Aflak Mein Takbeer-e-Musalsal
Ya Khak Ke Aghosh Mein Tasbeeh-o-Munajat

Woh Mazhab-e-Mardan-e-Khud Agah-o-Khuda Mast
Ye Mazhab-e-Mullah-o-Jamadat-o-Nabataat

————————————–

Though I have little of rhetorician’s art,
Maybe these words will sink into your heart:
A quenchless crying on God through the boundless sky—
A dusty rosary, earth‐bound litany—
So worship men self‐knowing, drunk with God;
So worship priest, dead stone, and mindless clod.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے